جمعرات , 15 نومبر 2018

میری امّی

(قیصر اعوان)

’’یہ اُٹھ کر دودھ پی لو، بھوک لگ گئی ہو گی۔‘‘ امّی جو تھوڑی دیر پہلے تک احمد کے دیر سے گھر آنے پر خفا تھیں اب اُس کے بیڈ کے سامنے دودھ کا گلاس لیے کھڑی بڑے پیار سے کہہ رہی تھیں۔

’’احمد! بیٹا میں نے ناشتہ تیار کر دیا ہے۔‘‘ امّی نے کچن سے آواز لگائی، مگر احمد سُنی ان سُنی کرتا ہوا اپنی تیاری میں لگا رہا۔

’’احمد!‘‘ امّی نے تھوڑی دیر بعد دوبارہ آواز دی۔

’’آ رہا ہوں امّی، تھوڑا صبر کرلیں۔‘‘ احمد اونچی آواز میں بولا۔ ’’ایک تو یہ نوٹس نہ جانے کدھر رکھ دیے ہیں۔‘‘ اُس نے نوٹس ڈھونڈھتے ہوئے کمرے کی ہر چیز اِدھر اُدھر کردی تھی۔

’’بیٹا! ناشتہ ٹھنڈا ہو رہا ہے، پہلے ناشتہ کرلو پھر تیاری کر لینا۔‘‘ امّی دروازے پر کھڑی تھیں۔

’’آپ بھی حد کرتی ہیں امّی، ناشتہ کونسا بھاگا جا رہا ہے، کر لیتا ہوں آ کر۔‘‘ وہ نوٹس ڈھونڈھتے ہوئے بیزاری سے بولا۔

’’چلو میں کچن میں تمہارا انتظار کر رہی ہوں، جلدی آ جانا۔‘‘ امّی نرمی سے بولیں اور کچن کی طرف چل پڑیں۔

وہ کچھ دیر تک تو کچن میں بیٹھی اُس کا انتظار کرتی رہیں، مگر جب وہ نہ آیا تو وہ خود ناشتہ لے کر اُس کے کمرے میں پہنچ گئیں۔ ’’آج پھر بھوکا چلا گیا۔‘‘ امّی نے خالی کمرہ دیکھ کر مایوسی سے کہا۔ ’’کیا کروں اِس لڑکے کا، پریشان کر کے رکھ دیا ہے، نہ جانے یونیورسٹی میں کچھ کھائے گا بھی کہ نہیں۔‘‘ اُنہوں نے ناشتے کی ٹرے ایک طرف رکھی اور بیڈ پر پڑی کتابیں سمیٹنے لگ گئیں۔

یہ احمد کا آئے روز کا معمول تھا۔ امّی وقت پر ناشتہ تیار کر کے اُسے آوازیں دیتی دیتی تھک جاتیں مگر وہ بغیر ناشتہ کیے ہی یونیورسٹی چلا جاتا، اِس بات کی پرواہ کیے بغیر کہ پیچھے امّی کے دل پر کیا گزرتی ہو گی، اور وہ بیچاری اُس وقت تک پریشان رہتیں جب تک وہ یونیورسٹی سے واپس آکر کچھ کھا نہیں لیتا۔

’’رات کا ایک بجنے والا ہے، یہ وقت ہے تمھارے گھر آنے کا۔‘‘جیسے ہی احمد گھر میں داخل ہوا، امّی سامنے کھڑی تھیں۔

’’امّی! بتا کر تو گیا تھا آپ کو کہ آج دوستوں کے ساتھ باہر کھانے کا پروگرام ہے۔‘‘

’’مگر تم تو کہہ رہے تھے کہ دس بجے تک واپس آ جاؤں گا لیکن اب ایک بجے واپس آ رہے ہو؟ ‘‘ امّی ناراضگی سے بولیں۔

’’بس اچانک دوستوں کے ساتھ فلم دیکھنے کا پروگرام بن گیا تھا، اِس لیے لیٹ ہو گیا۔‘‘

’’حد ہوتی ہے لاپرواہی کی بھی، تم ایک کال کرکے بتا بھی تو سکتے تھے ناں۔ اور تمھارا نمبر بھی مسلسل بند جا رہا تھا، اوپر سے شہر کے حالات اتنے خراب ہیں، تمہیں اندازہ بھی ہے کہ میں کتنی پریشان تھی تمھارے لیے۔ ‘‘امّی آنسو ضبط کرتے ہوئے بولیں۔

’’مین گیٹ کی چابی تو تھی نا میرے پاس، آپ کو کس نے کہا تھا اتنا پریشان ہونے کو، جا کر سو جاتیں۔ اب چھوٹا بچہ تو ہوں نہیں میں کہ مجھے اپنے اچھے بُرے کا بھی پتا نہیں ہوگا۔ اور آپ کی انہی باتوں کی وجہ سے نمبر بند کردیا تھا میں نے کہ گھر جاکر لیکچر تو سننا ہی ہے، تھوڑا کم کیا زیادہ کیا۔‘‘

’’تم یہ کہہ سکتے ہو، بیٹا۔ تم کیا جانو کہ ماں کی تکلیف کیا ہوتی ہے۔ تمہارے ابّا کے مرنے کے بعد تم بہن بھائیوں کو میں نے جس طرح پالا ہے وہ یا میں جانتی ہوں یا میرا اللہ۔ جب میں مرگئی تو پھر تمہیں احساس ہو گا کہ۔۔۔‘‘

’’خدا کا واسطہ امّی، اب پھر سے شروع نہ ہو جائیے گا یہ فلموں ڈراموں والی باتیں کرنا۔ مجھے بہت نیند آ رہی ہے اور میں سونے جا رہا ہوں۔‘‘ وہ امّی کی بات کاٹتے ہوئے بولا اور اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا۔

’’یہ اُٹھ کر دودھ پی لو، بھوک لگ گئی ہوگی۔‘‘ امّی جو تھوڑی دیر پہلے تک احمد کے دیر سے گھر آنے پر خفا تھیں اب اُس کے بیڈ کے سامنے دودھ کا گلاس لیے کھڑی بڑے پیار سے کہہ رہی تھیں۔

’’امّی! دعوت پر گیا تھا، کھانا کھا کر آیا ہوں۔ بس اب سونا ہے، پلیز ڈسٹرب نہ کریں۔‘‘ وہ کروٹ لیتا ہوا بولا۔ ’’اور جاتے ہوئے کمرے کی لائٹ آف کر دیجئے گا۔

’’اچھا جب بھوک لگے تو پی لینا،‘‘ اُنہوں نے دودھ کا گلاس سائیڈ ٹیبل پر رکھتے ہوئے کہا اور کمرے سے چلی گئیں۔

اور پھر کئی دنوں بعد آج جب وہ رات دیر سے گھر لوٹا تو ہمیشہ کی طرح آج امّی اُسے ڈانٹنے کے لیے سامنے نہیں کھڑی تھیں، وہ کچھ دیر کے لیے ٹھہرا اور پھر آنکھوں میں آنسو لیے چپ چاپ اپنے کمرے میں جا کر لیٹ گیا۔ صبح جب آنکھ کھلی تو احساس ہوا کہ یونیورسٹی سے لیٹ ہوچکا تھا۔

آج پھر وہ بغیر ناشتہ کیے یونیورسٹی جا رہا تھا، بھوک بھی شدت سے محسوس ہو رہی تھی، مگر امّی نہیں تھیں۔ اُس نے سائیڈ ٹیبل پر پڑی امّی کی تصویر کو چوما اور روتا ہوا یونیورسٹی کے لیے گھر سے نکل پڑا۔

’’جب میں مر گئی تو پھر احساس ہو گا تمہیں‘‘

امّی کی باتیں اُس کے دماغ میں گونج رہی تھیں جنہیں وہ ہمیشہ فلموں ڈراموں والی باتیں کہہ کر نظر انداز کردیا کرتا تھا۔ بعض چیزوں کی قدر اُن کے چھن جانے کے بعد ہوتی ہے، مگر اُس وقت تک بہت دیر ہو چکی ہوتی ہے۔

نوٹ: ایکسپریس نیوز اور اس کی پالیسی کا لکھاری کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ بشکریہ ایکسپریس نیوز

یہ بھی دیکھیں

اسرائیلی جارحیت کا منہ توڑ جواب، توازن پوری طرح بدل گئے

غزہ اور اسرائیل کے درمیاں تصادم بڑھ گیا ہے ۔ اسرائیل کے تحریک آمیز اقدامات ...