بدھ , 17 جنوری 2018

وفاقی کابینہ کا فاٹا اصلاحات کیلئے نیا بل منظور کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) حکومت نے فاٹا اصلاحات کے معاملے پر بڑا فیصلہ کرتے ہوئے قبائلی رواج بل 2017 کی جگہ نیا بل منظور کرنے کا فیصلہ کرلیا۔وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس وزیراعظم ہاؤس میں ہوا جس میں جنوبی ایشیا اور افغانستان کے لیے نئی امریکی پالیسی اور خطے کی سیاسی صورتحال کا بھی جائزہ لیا گیا۔ذرائع کا کہنا ہےکہ وزارت خارجہ کے حکام کابینہ کو امریکی پالیسی کے بعد سفارتی سطح پر اٹھائے گئے اقدامات سے آگاہ کیا۔

ذرائع کے مطابق اجلاس میں فاٹا اصلاحات سے متعلق بڑا فیصلہ کرلیا گیا ہے اور ایف سی آر کے خاتمے کے لیے کابینہ قبائلی رواج بل 2017 کی جگہ نیا بل منظور کرے گی۔

ذرائع نے بتایا کہ بل کے ذریعے فوری طور پر سپریم کورٹ اور ہائیکورٹ کا دائرہ اختیار فاٹا تک بڑھایا جائے گا اور بل کو فوری پارلیمنٹ میں بھی پیش کیا جائے گا۔نئے بل کے تحت پاکستان کے معمول کے قوانین کا قبائلی علاقہ جات میں بھی اطلاق ہوگا جب کہ وفاقی حکومت فاٹا اصلاحات پر مرحلہ وار عمل درآمد کرے گی۔

ذرائع کے مطابق وفاقی کابینہ کی جانب سے یہ فیصلہ فاٹا سے متعلق بل قائمہ کمیٹیوں میں پھنسا ہونے کے باعث کیا گیا، حکومت نے اس حوالے سے بل مئی 2017 میں منظوری کے بعد پارلیمنٹ میں پیش کیا تھا تاہم مولانا فضل الرحمان اور محمود اچکزئی نے بل کی مخالفت کی تھی۔

یہ بھی دیکھیں

آیت اللہ سید علی خامنہ ای سے چیئرمین سینیٹ رضا ربانی کی ملاقات

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک) چیئرمین سینیٹ پاکستان ،میاں رضا ربانی نے تہران میں رہبر انقلاب اسلامی ...