ہفتہ , 6 مارچ 2021

بلوچستان میں عام شہریوں کی ہلاکتوں میں اضافہ اور احساس محرومی

570dcec25f245

کراچی: انسانی حقوق کمیشن پاکستان (ایچ آر سی پی) کی چیئرپرسن زہرا یوسف نے بلوچستان میں قلات کے علاقے جوہان اور مستونگ کے علاقے اسپلنگی میں فورسز کے مبینہ آپریشن میں عام شہریوں کی ہلاکت کی اطلاعات پر تشویش کا اظہار کیا ہے زہرا یوسف کے مطابق سیکیورٹی اداروں کے لیے ضروری کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ ضرورت سے زیادہ طاقت استعمال نہ ہو، اس سے بلوچستان کی عوام میں احساس محرومی بڑھے گا  یاد رہے کہ تین روز قبل جوہان کے علاقے میں سیکیورٹی فورسز کے آپریشن کے دوران عبد النبی بنگلزئی نامی مبینہ عسکریت پسند کئی ساتھیوں سمیت ہلاک ہوگیا تھا، بعدازاں میڈیا کو جاری کیے گئے سرکاری اعلامیے میں کہا گیا کہ عبد النبی بنگلزئی کالعدم یونائیٹڈ بلوچ آرمی کا مبینہ کمانڈرتھا۔ مزید پڑھیں: مستونگ میں مغوی مسافروں کو قتل کر دیا گیا عبدالنبی بنگلزئی کے حوالے سے یہ بھی بتایا گیا تھا کہ وہ گزشتہ برس جون میںمستونگ میں 22 پختون مسافروں کے قتل میں ملوث تھا  بلوچستان کے وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے رواں ماہ کے شروع میں بتایا تھا کہ قلات کے علاقے جوہان میں ایک کریک ڈاؤن میں 34 مشتبہ دہشت گرد ہلاک ہوئے۔ یہ بھی پڑھیں : بلوچستان میں عبد النبی بنگلزئی سمیت 34 ‘دہشت گرد’ ہلاک اس آپریشن کے بعد سے جوہان اور اسپلنگی میں مشتبہ عسکریت پسندوں کی ہلاکتوں پر میڈیا میں متواتر تبصرے ہو رہے ہیں،

یہ بھی دیکھیں

فلسطین کی آزادی اور اسرائیل کا خاتمہ، پاکستانی قوم کی خواہش

حماس کے رہنما اسمٰعیل ہنیہ نے کہا ہے کہ پاکستان نے ہمیشہ فلسطین کی حمایت …