پیر , 1 مارچ 2021

چین کے سائنسدانوں نے بارش کے قطروں کو بجلی میں بدلنے والا سولرپینل بنالیا

490152-rain-1460474175-523-640x480

بیجنگ: پانی اور کوئلے سے بجلی کی پیداوار کے مہنگے ہونے کی وجہ سے سائنس دان قدرتی ذرائع کے ذریعے بجلی پیدا کرنے کی کوششو میں مصروف ہیں اور اسی کوشش میں چین کے سائنسدانوں نے ایسا سولر سسٹم تیار کیا ہے جو نہ صرف سورج کی شعاعوں سے بلکہ بارش کے قطروں سے بھی بجلی پیدا کرسکے گا۔

اوشین یونیورسٹی آف چین اور یونن نومال یونیورسٹی کے سائنس دانوں نے اس سولر سسٹم کا ڈیزائن تیار کیا ہے جو سورج کی شعاعوں سے ہی نہیں بلکہ بارش سے بھی کام کرنا شروع کردیتا ہے اس طرح بارش کے پانی کو زمین پر گرنے سے قبل ہی قیمتی بنا کر توانائی میں بدل دیتا ہے۔ سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ اس ٹیکنالوجی میں الیکٹران سے بھرے گریفنے الیکٹروڈ کو ڈرائی سینسیٹائز سیل کے ساتھ مل کر بنایا گیا ہے جس کی وجہ سے یہ ہر طرح کے موسم میں بجلی پیدا کرسکتا ہے۔ ڈائی سینسیٹائزڈ سیل باریک فلم پر مشتمل فوٹووالٹایک سیلز ہیں جس کی مدد سے آرگنک ڈائی سورج کی روشنی کو جذب کرکے الیکٹران اخراج کرتا ہے جس سے بجلی پیدا ہونا شروع ہوجاتی ہے۔

سائنس دانوں کے مطابق اس نئی ٹیکنالوجی میں ہر قسم کے موسم کے سولر سیلز لگائے گئے ہیں جس میں انتہائی اعلیٰ کنڈکٹو گریفینے کی باریک لیئر کا استعمال کرتے ہوئے سولر سیل بارش سے بجلی پیدا کریں گے۔ یہ سسٹم بارش میں موجود نمک آئنز کو الگ کردیتا ہے جس سے گریفنے بنتا ہے جو قدرتی پانی سے مل کر بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت حاصل کرلیتا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

یکم جنوری سے ان اسمارٹ فونز پر واٹس ایپ نہیں چلے گا

لندن: پیغام رسانی، آڈیو اور ویڈیو کال کی معروف واٹس ایپ یکم جنوری 2021 سے …