جمعرات , 23 نومبر 2017

کیا دولتِ اسلامیہ کا خاتمہ قریب ہے؟


ایک ہی دن میں شام اور عراق میں شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے ہاتھوں سے دو بچے کھچے اہم ٹھکانے نکل گئے ہیں۔ شامی فوج نے اعلان کیا ہے کہ انھوں نے دیر الزور شہر پر قبضہ کر لیا ہے۔ اسی دن بعد میں عراقی وزیرِ اعظم حیدر العبادی نے کہا کہ عراقی شہر القائم دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے چھڑا لیا گیا ہے۔العبادی کا کہنا تھا کہ شہر پر ‘ریکارڈ وقت’ میں قبضہ کیا گیا۔

عراقی فوج کا کہنا ہے کہ اس نے دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے شام اور عراق کی سرحد پر آخری چوکی بھی چھڑا لی ہے۔گذشتہ ماہ امریکی حمایت یافتہ شامی اتحاد نے شام میں رقہ پر قبضہ کر لیا تھا۔ دولتِ اسلامیہ نے اسا اپنا ‘دارالخلافہ’ قرار دے رکھا تھا۔

چار ماہ قبل عراق کے دوسرے بڑے شہر موصل سے بھی دولتِ اسلامیہ کو نکال باہر کر لیا گیا تھا۔
تاہم بی بی سی کے عرب امور کے ایڈیٹر سبیسٹیئن اشر کہتے ہیں کہ دولتِ اسلامیہ کے زمینی عزائم قریب قریب تباہ ہو چکے ہیں، لیکن اس کا نظریہ اب بھی مضبوط ہے۔

یہ فتوحات کس قدر اہم ہیں؟
دولتِ اسلامیہ دیر الزور پر 2014 سے قابض ہے۔ اس شہر کی بڑی اہمیت یہ ہے کہ یہ شامی سرحد سے بہت قریب واقع ہے۔دولتِ اسلامیہ نے سرحد کے دونوں اطراف کے علاقے کو ‘صوبۂ فرات’ کا نام دے رکھا تھا اور اسے جنگجو، اسلحہ اور سامان ایک ملک سے دوسرے تک لے جانے کے لیے استعمال کرتی تھی۔دو ملکوں میں واقع صوبے سے دولتِ اسلامیہ یہ پیغام بھی دینا چاہتی تھی کہ وہ اس خطے کی 1916 کو ہونے والے سائیکس پکٹ معاہدے کے تحت تقسیم کے خلاف ہے۔ اس معاہدے کے تحت مشرقِ وسطیٰ کے بیشتر ملکوں کی سرحدوں کا تعین ہوا تھا۔

دولتِ اسلامیہ کے پاس اب بھی کون سے علاقے ہیں؟
شام میں دیر الزور صوبے میں چند علاقے ایسے ہیں جہاں اس شدت پسند تنظیم کے جنگجو اب بھی موجود ہیں۔ شام کی سرکاری فوج جنگجوؤں کے اتحاد ایس ڈی ایف کے ساتھ مل کر انھیں بچے کھچے علاقوں سے نکالنے کی کوشش کر رہی ہیں۔بعض علاقوں میں ایس ڈی ایف اور شامی فوج نے ایک دوسرے سے چند کلومیٹر دور مورچہ بندی کر رکھی ہے۔

ایس ڈی ایف کے ترجمان کینو جبریل نے بی بی سی کو بتایا کہ انھیں اب بھی بعض جگہوں پر مزاحمت کا سامنا ہے کیوں کہ دولتِ اسلامیہ خود کش کاریں اور ٹرک، میزائل اور مورٹر گولے استعمال کر رہی ہے۔جبریل کے مطابق بعض دیہات میں گھر گھر لڑائی ہو رہی ہے۔

سرحد کی دوسری طرف عراقی فوج نے حالیہ مہینوں میں دریائے فرات کے ساتھ پیش قدمی کر کے دولتِ اسلامیہ کو پے در پے شکستوں سے دوچار کیا ہے۔ایس ڈی ایف کے مطابق اس علاقے میں دولتِ اسلامیہ کے ڈیڑھ ہزار کے قریب جنگجو بچے ہیں۔

کیا یہ دولتِ اسلامیہ کا خاتمہ ہے؟

تین سال قبل دولتِ اسلامیہ کے پاس جتنا علاقہ تھا، اس کا 95 فیصد حصہ اس سے چھینا جا چکا ہے اور 44 لاکھ عراقی شہریوں کو اس کے تسلط سے آزاد کروایا جا چکا ہے۔

برطانوی فضائیہ آر اے ایف کے ایک سینئر افسر نے جمعے کو کہا کہ دولتِ اسلامیہ کے پاس چند ہی مہینے باقی بچے ہیں۔تاہم کموڈور جانی سٹرنگر نے لندن میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ اب دولتِ اسلامیہ یقیناً ایک چھاپہ مار تنظیم کے روپ میں ڈھل جائے گی اور دونوں ملکوں میں حملے کرتی رہے گی۔بشکریہ بی بی سی

یہ بھی دیکھیں

ٹرمپ کا لاڈلہ سعودی شہزادہ بن سلمان

ٹرمپ کا لاڈلہ سعودی شہزادہ بن سلمان