جمعرات , 23 نومبر 2017

’’سپیئر‘‘ سعودی شہزادہ امریکہ فرار ہونے میں کامیاب

(تسنیم خیالی!)
تقریباً ایک ہفتہ قبل سعودی عرب میں ولی عہد محمد بن سلمان کے حکم پر کرپشن کے نام پر بڑے پیمانے پر گرفتاریاں عمل میں لائی گئیں اور گرفتار ہونے والوں میں طاقتور سمجھے جانے والے سعودی شہزادے بھی شامل تھے جیسا کہ شہزادہ الولید بن طلال اور شہزادہ متعب بن عبداللہ۔

البتہ گرفتاریوں سے چند گھنٹے قبل بڑوں میں شمار ہونے والے طاقتور سعودی شہزادہ سعودی عرب سے امریکہ فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے تھے یہ شہزادہ کوئی اور نہیں بلکہ احمد بن عبدالعزیز آل سعود ہیں جو رشتے میں سعودی فرمانروا شاہ سلمان کے سگے بھائی اور محمد بن سلمان کے چچا ہیں۔

شہزادہ احمد بن عبدالعزیز 1975ء سے 2012 تک نائب وزیر داخلہ کے منصب پر فائز رہے ہیں اور ان کا شمار بانی سعودی عرب شاہ عبدالعزیز کے طاقتور ترین بیٹوں میں ہوتا ہے اور وہ سدیری شہزادوں میں سے ایک ہیں جن کی والدہ حصہ السدیری ہیں۔احمد بن العزیز بہت سے تجزیہ نگاروں کے نزدیک شاہ سلمان کے موزوں ترین جانشین ہیں اور حقیقت میں بھی ایسا ہی کچھ ہے کیونکہ آل سعود خاندان کا ایک بہت بڑا حصہ احمد بن العزیز کی حمایت کرتا ہے۔جس کی بنا پر یہ کہنا کہ محمد بن سلمان کا سب سے بڑا حریف احمد بن عبدالعزیز ہیں بے جا نہیں۔

آل سعود خاندان سے حاصل ہونے والی معلومات کے مطابق بن سلمان نے احمد بن عبدالعزیز کی بیرون ملک جانے پر پابندی عائد کر رکھی تھی،البتہ اس پابندی کو خاظر نہ لاتے ہوئے شہزادہ احمد امریکہ روانہ ہونے کیلئے جب ایئرپورٹ پہنچے تو ایئرپورٹ پر موجود سیکیورٹی عناصر نے شہزادہ احمد کو روک لیا۔اس واقعہ کے بعد امریکہ نے مداخلت کرتے ہوئے بن سلمان پر دباؤ ڈالا کہ وہ شہزادہ احمد کو امریکہ آنے سے نہ روکے،جس کے بعد بن سلمان نے شہزادہ احمد بن عبدالعزیز کو امریکہ جانے کی اجازت دے دی اور اس وقت شہزادہ احمد امریکہ میں موجودہ ہیں۔

تجزیہ نگاروں کا ماننا ہے کہ شہزادہ احمد کی امریکہ روانگی سے بھی ثابت ہوتا ہے کہ احمد خود کو ایک محفوظ جگہ رکھنا چاہتے ہیں تاکہ اگر بن سلمان اپنے منصوبوں میں ناکام ہوگئے اور سعودی فرمانروا نہ بن سکے تو سعودی عرب میں حکومت آل سعود کو بچانے کیلئے امریکہ انہیں سعودی بادشاہ نصب کر دے گا۔

بظاہر تو احمد بن عبدالعزیز کا منصوبہ اچھا ہے مگر اس بات کی کوئی گارنٹی نہیں کہ شہزادہ احمد ہی وہی ’’سپیئر‘‘ شہزادہ ہے جس پر امریکہ کو اعتماد ہے کیونکہ ممکن ہے کہ امریکہ کے پاس اور بھی کئی ’’سپیئر‘‘ شہزادے ہوں جنہیں بن سلمان کے سعودی فرمانروا نہ بننے کی صورت میں استعمال کیا جائے۔

یہ بھی دیکھیں

الوداع‘ چین کو الوداع

(محمد اسلم خان….چوپال) ہزار سالہ تاریخ گواہ ہے چین کے کبھی جارحانہ اور توسیع پسندانہ ...