بدھ , 13 دسمبر 2017

اس وقت سے پہلے ناشتہ کرنا صحت کیلئے فائدہ مند

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) یہ تو طبی ماہرین عرصے سے کہہ رہے ہیں کہ ناشتہ دن کی سب سے اہم غذا ہوتی ہے، جسے چھوڑنا جسمانی گھڑی کو متاثر کرکے موٹاپے سمیت کئی طرح کے امراض کا باعث بن سکتا ہے۔تاہم اب یہ بات سامنے آئی ہے کہ ناشتے کا وقت بھی موٹاپے، ذیابیطس ٹائپ ٹو، فشار خون اور خون کی شریانوں سے جڑے امراض سے بچانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔یہ دعویٰ ایک تحقیق میں سامنے آیا جس کے مطابق ناشتہ ایک مخصوص وقت تک کرلینا ہی جسمانی گھڑی کو دن بھر ریگولیٹ رکھنے میں مدد دیتا ہے۔

جس سے متعدد امراض سے بچا جاسکتا ہے۔یہ پہلی بار کسی تحقیق میں جسمانی گھڑی اور غذا کے تعلق کا جائزہ لیا گیا ہے۔واضح رہے کہ جسم کی اندرونی گھڑی اور جسم پر غذا کے اثرات پر ہی رواں برس طب کا نوبیل انعام دیا گیا تھا۔اب نئی تحقیق کے مطابق صبح ساڑھے نو بجے سے پہلے ناشتہ کرلینا چاہئے تاکہ جسمانی گھڑی کو گلوکوز میٹابولزم کے مطابق تبدیل اور ریگولیٹ کرنے میں مدد مل سکے جو کہ جسمانی وزن، بلڈ پریشر اور دیگر جسمانی افعال پر اثر انداز ہوتے ہیں۔محققین کا کہنا تھا کہ ساڑھے نو بجے سے،

پہلے ناشتہ کرلینا جسم کے پورے میٹابولزم میں بہتری لاتا ہے، جسمانی وزن میں کمی میں مدد دیتا ہے جبکہ ذیابیطس ٹائپ ٹو اور عمر بڑھنے سے جڑی دیگر طبی پیچیدگیوں کا خطرہ کم کرتا ہے۔اس تحقیق کے دوران اٹھارہ صحت مند اور 18 موٹاپے کے شکار افراد کے کھانے کے اوقات اور جسم پر مرتب ہونے اثرات کا جائزہ لیا گیا۔نتائج سے معلوم ہوا کہ ایک مخصوص وقت سے پہلے کھانے سے دونوں گروپس کے افراد کی جسمانی گھڑی کے ان مخصوص جینز میں بہتری آئی جو کہ جسمانی وزن میں کمی کے لیے موثر ہوتے ہیں،

جبکہ گلوکوز اور انسولین کی سطح بھی بہتر ہوئی۔تحقیق کے دوران کیے جانے والے تجربات سے معلوم ہوا کہ ناشتہ چھوڑا بلڈ شوگر بڑھانے، انسولین کے ردعمل کو متاثر کرتا ہے جس کے نتیجے میں جسمانی وزن میں اضافہ ہوسکتا ہے، چاہے دن کے باقی حصے میں زیادہ غذا کا استعمال نہ بھی کیا جائے۔

یہ بھی دیکھیں

انسانی صحت کے لیے تباہ کن عادت

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) نمک ایسی چیز ہے جس کے بغیر کسی کھانے کو ذائقے ...