بدھ , 13 دسمبر 2017

صالح کی موت ۔۔۔۔۔۔کیا ہوا اور کیا ہوگا

یمن کے سابق صدر عبداللہ صالح کی ہلاکت کی ویڈیو (بچے مت دیکھیں)

یمن کے سابق صدر عبداللہ صالح کی ہلاکت کی ویڈیو (بچے مت دیکھیں)

Posted by Iblagh News on Montag, 4. Dezember 2017

(تسنیم خیالی)
یمنیوں نے بالآخر یمن پر 33 سال حکومت کرنے والے علی عبداللہ صالح کو اپنے منطقی انجام تک پہنچا دیا ہے،کہا جاتا ہے کہ ہر وہ آمر جو اپنی عوام پر ظلم ڈھاتا ہے بالآخر اپنی ہی عوام کے ہاتھوں مارا جاتا ہے ،ٹھیک اسی طرح جس طرح صدام حسین اور معمر القذافی مارے گئے تھے۔
یہ سب کیسے ہوا؟

علی عبداللہ صالح کو اس بھیانک انجام تک پہنچانے میں امارات اور سعودی عرب کا اہم کردار شامل ہے،صاف لفظوں میں یوں کہیں کہ امارات اور سعودی عرب نے صالح کو اکسانے کے بعد اسے پھنسا دیا اور آخر کار دھوکہ دے کر موت کے منہ میں چھوڑ دیا ۔

امارات اور سعودی عرب نے ہی علی عبداللہ صالح کو حوثیوں کے ساتھ غداری اور دھوکہ دہی پر اکسایا اور اسے باور کرایا کہ وہ اس کا ساتھ دیں گے اور اس کی زندگی کی حفاظت کریں گے۔ جس کے بعد چند روز قبل اچانک سے صالح نے حوثیوں کے ساتھ قائم اتحاد کو تحلیل کرتے ہوئے حوثیوں پر پلٹ گئے اور یمن پر جارح سعودی عرب،امارات اور ان کے اتحادیوں کے گن گانے لگے۔

اس ضمن میں ذرائع کے مطابق آخری دو ہفتوں میں صالح امارات اور سعودی عرب کے درمیان رابطوں میں تیزی سے اضافہ ہوا تھا جن کے نتیجے میں یہ طے پایا گیا کہ انصاراللہ کو ختم کر کے یمن میں علی عبداللہ صالح کے بیٹے احمد (جوکہ امارات میں مقیم ہے) کو صدر بنایا جائے گا۔

اس تمام معاملے میں امارات کا کلیدی کردار رہا اور اسی نے ہی سعودی عرب کو منایا تھا جس کی خواہش ہے کہ یمن کا معاملہ سیاسی طریقے سے حل کیا جائے کیونکہ عسکری طریقہ کارناکام ہوچکا ہے۔

پلان کے مطابق صالح نے حوثیوں کے ساتھ اتحاد ختم کرتے ہوئے نہ صرف حوثیوں کے ساتھ بلکہ یمن،یمنی عوام اور یمنی خون کے ساتھ غداری کی ہے ،جس کے بعد صالح کے حامیوں اور حوثیوں کے درمیان یمنی دارالحکومت صنعا میں شدید مسلح جھڑپیں شروع ہوئیں۔

جھڑپوں کے نتیجے میں صالح صنعا سے فرار ہونے کی کوشش میں اپنے آبائی علاقے سخاں میں حوثیوں کے ہاتھوں مارے گئے ۔قابل ذکر بات یہ بھی ہے کہ یہ وہی حوثی ہیں جن کی تحریک کو 2004 میں صالح نے بے دردی سے کچلا تھا اور انصار اللہ کے اس وقت کے سربراہ اور بانی سید حسین بدرالدین الحوثی کو فوج کے ہاتھوں قتل کروایا اور ان کے جسد خاکی کو نو سال تک حکومت کی تحویل میں رکھا۔

یمن میں حوثیوں نے سابق صدر کو ہلاک کرکے ان کے گھر کو بموں سے ا…

یمن میں حوثیوں نے سابق صدر کو ہلاک کرکے ان کے گھر کو بموں سے اڑا دیا

Posted by Iblagh News on Dienstag, 5. Dezember 2017

صالح کی موت اماراتی اور سعودی انٹیلی جنس کی ایک بڑی ناکامی ہے ،صالح کی موت سے یمن کا معاملہ مزید پیچیدہ ہوگیا ہے اور آئندہ سالوں میں یمن کا استحکام دور تک نظر نہیں آرہا،دراصل سعودی عرب اور امارات یمن میں موجود تمام سیاسی و مسلح جماعتوں کو حوثیوں کے خلاف متحد کرنا چاہتے ہیں اور ایسا تب ممکن ہوسکتا تھا اگر صالح حوثیوں کو دھوکہ دے ،دھوکہ تو صالح نے دے دیا مگر وہ مارے گئے جس کی وجہ سے سعودی عرب اور امارات کا منصوبہ بری طرح ناکام ہوگیا۔

یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ صالح کے مارے جانے سے حوثیوں کو بھی نقصان پہنچا ہے وہ اس طرح کہ صالح کے حوثیوں کے ہاتھوں مارے جانے سے سعودی عرب اور امارات دنیا بھر میں یہ کہتے پھریں گے کہ انصاراللہ ایک دہشت گرد جماعت ہے جو اپنے اتحادیوں کو بھی ختم کردیتی ہے۔
صالح کی موت کے بعد انصاراللہ کے سربراہ سید عبدالملک الحوثی نے اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ صالح نے یمن اور یمنیوں کے ساتھ غداری کی اور دشمنوں کے ساتھ جا ملے اور ملک میں ایک بڑے فتنے کو جنم دینے کی کوشش کی، جس کا خاتمہ کر دیا گیا ہے۔

عبدالمالک الحوثی کا مزید کہنا تھا کہ صالح اور ان کے ساتھیوں کو بات چیت کے ذریعے سمجھانے کی کوشش کی گئی تھی البتہ وہ فتنہ پھیلانے پر بضد تھے جس کے بعد مسلح کارروائی کے علاوہ اور کوئی چارہ باقی نہیں رہا۔اب جبکہ صالح مارے جاچکے ہیں تو یہ واضح ہونا چاہیے کہ یمن کا معاملہ مزید بگڑ چکا ہے اور یمن میں خون ریزی مزید بڑھ جائے گی۔جس کی وجہ سے نقصانات میں اضافہ ہوگا۔

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان یہ سوچتے ہوں گے کہ یمن کے اندرونی معاملات میں دخل اندازی معمولی بات ہے مگر ایسا قطعاً نہیں اور ان کے لیے اب یہ معاملہ مزید الجھ گیا ہے۔امارات کی بات کی جائے تو اماراتی ولی عہد محمد بن زاید کیلئے صالح کی موت جتنی نقصان دہ ہے اتنی ہی فائدے مند بھی ہے کیونکہ وہ اگرچہ یہ چاہتے ہیں کہ یمن کا معاملہ ختم ہو مگر وہ یہ بھی چاہتے ہیں کہ یمن کی جنگ جاری رہے کیونکہ جنگ جاری رہنے سے سعودی عرب پھنسا رہے گا اور اس کو ہی زیادہ نقصان ہوگا۔

ویسے بھی اگر احمد علی عبداللہ صالح اقتدار میں آتے ہیں تب بھی امارات کا فائدہ ہوتا اور اگر جنگ جاری رہتی ہیں تب بھی اسی کا ہی فائدہ ہوتا۔

یہ بھی دیکھیں

سعودی عرب: سینما کی واپسی کا سفر

سعودی عرب میں سینما ہالز پر پابندی ختم کرنے کا اعلان (ویڈیو پیکج) سعودی عرب ...