بدھ , 13 دسمبر 2017

صرف اڑھائی گھنٹے کا اجلاس

تسنیم خیالی
کویت نے جیسے تیسے کر کے رواں ماہ کی 5 تاریخ کو خلیج کونسل کے سربراہان کا اجلاس منعقد کر دیا البتہ اس اجلاس میں بیش تر سربراہان غیر حاضر رہے ،کسی نے اپنے وزیر خارجہ اور کسی نے نائب وزیر اعظم کو بھیجا تو کسی نے اپنا وزیر مملکت۔
بحکم میزبان ملک کویت کے امیر شیخ صباح الاحمد الصباح نے اجلاس کی سربراہی کی اور خود اجلاس میں شرکت کیلئے آنے والی شخصیات کا استبقال کیا۔
سعودی عرب،امارات اور بحرین کی زد میں آنے والے قطر کے امیر شیخ تمیم بن حمد آل ثانی نے اجلاس میں شرکت کی،اس طرح انہوں نے امیر کویت کو ایک طرف عزت بخشی تو دوسری طرف یہ ثابت کیا کہ وہ بائیکاٹ کرنے والے ممالک کے سربراہان سے خود مقابلہ کرنے اور اس معاملے کو حل کرنے کیلئے تیار ہیں۔
سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان نے آخری لمحات میں شرکت سے معذرت کرتے ہوئے اپنے وزیر خارجہ عادل الجبیر کو اجلاس میں شرکت کے لیے بھیجا،یہ بات یاد رہے کہ شاہ سلمان نے امیر کویت سے وعدہ کیا ہوا تھا کہ وہ اجلاس میں شرکت کریں گے۔
بحرینی فرمانروا شاہ حمد بن عیسیٰ آل خلیفہ نے اجلاس میں شرکت نہیں کی اور نائب وزیر اعظم کو اپنی جگہ بھیجا،شاہ حمد نے پہلے سے اعلان کر رکھا تھا کہ وہ ایسے کسی بھی اجلاس میں شرکت نہیں کریں گے جس میں شیخ تمیم بن حمد شریک ہوں گے۔
امارات نے بھی سعودی عرب اور بحرین کا ساتھ دیتے ہوئے اماراتی مملکت برائے خارجہ امور انور قرقاش کو بھیجا،نہ شیخ خلیفہ شریک ہوئیے نہ محمد بن زاید اور نہ ہی وزیراعظم محمد بن راشد المکتوم۔
رہی عمان کی بات تو سلطان قابوس بن سعید نے اجلاس میں شرکت نہیں کی اور نائب وزیراعظم کو اجلاس میں شرکت کیلئے بھیج دیا۔
ماہرین کے مطابق خلیج کونسل کا حالیہ اجلاس کونسل کی تاریخ کا بد ترین ،مختصر ترین اور سب سے بیکار اجلاس تھا ،مجموعی طور پر اجلاس کی مدت صرف اڑھائی گھنٹے پر محیط تھا جس کے بعد سب اپنے اپنے گھروں کو لوٹ گئے۔
اجلاس کے روز امارات نے اہم اعلان کرتے ہوئے کہا کہ امارات اور سعودی عرب ایک نیا عسکری ،اقتصادی ،سیاسی اور ثقافتی اتحاد تشکیل دینے جارہے ہیں جس کی سربراہی اماراتی ولی عہد محمد بن زاید اور سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کریں گے۔یہ اعلان کوئی معمولی بات نہیںاور ماہرین کے نزدیک یہ اتحاد خلیج کونسل کا نیا متبادل ہوگا۔جس میں آئندہ دنوں میں بحرین بھی شامل ہوجائے گا اور ممکن ہے کہ اس کے مقابلے میں کویت ،عمان اور قطر کے درمیان مزید نزدیکی دیکھنے میں آئے۔
خلیج کونسل کے حالیہ اجلاس نے کئی اہم سوالات کو جنم دیا ہے اور سب سے اہم سوال یہ ہے کہ کیا یہ خلیج کونسل سربراہان کا آخری اجلاس تو نہیں تھا؟

یہ بھی دیکھیں

سعودی عرب: سینما کی واپسی کا سفر

سعودی عرب میں سینما ہالز پر پابندی ختم کرنے کا اعلان (ویڈیو پیکج) سعودی عرب ...