جمعہ , 19 جنوری 2018

ٹرمپ نے اپنے ہاتھوں سے اسرائیل کے منصوبے خاک میں ملا دیئے

ٹرمپ نے قدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کر کے اسرائیل کے ساتھ خیانت کی ہے۔

1- ٹرمپ نے قدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کر کے اسرائیل کے ساتھ خیانت کی ہے، شاید کچھ اس کام کو فلسطینی مخالف قرار دیں، پر امریکہ نے اس کام سے اسرائیلی منصوبے کو خراب کر دیا ہے، اور شام اور عراق میں داعش پر کیے گئے خرچ اسی طرح اسرائیل کا لبنان اور غزہ پر جنگ کا خرچ بھی فضول ہو گیا ہے۔

2- ٹرمپ کے دو مشیروں کے مطابق ان کے اس اقدم سے آیپیک لابی میں ان کا سیاسی مقام بڑھ جائے گا، پر امریکی سیکورٹی ادارے، حقیقت بتا رہے ہیں، ٹرمپ کے اقدام سے اسلامی مزاحمت کو فائدہ ہوا ہے:

الف) ایران نے سالوں سے فلسطین کے مسئلے کو اجاگر کیا ہوا ہے، پر وہ تمام گروہوں کو یکجا نہیں کر سکا، کیونکہ کچھ سعودی، مصری اور اماراتی گروہ فلسطین کے مسئلے کو اپنے طریقے سے حل کرنا چاہتے تھے، پر ٹرمپ کے فیصلے نے سب کو یکجا کر دیا ہے۔

ب) امارات، سعودیہ اور مصر اسرائیل کے ساتھ معاہدے کی کوشش کر رہے تھے، پر اب اس اقدام کے بعد ان کا یہ منصوبہ بھی ناکام ہو گیا ہے۔

ج) فلسطین کا مسئلہ اس وقت عالم اسلام کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے، شام اور یمن کے مسائل کی وجہ سے سب کی توجہ فلسطین سے ہٹ گئی تھی، لیکن اس مسئلے کے بعد تمام مسلمانوں کی توجہ ایک بار پھر فلسطین کی جانب بڑھ گئی ہے۔

د) اسلامی مزاحمت کی مسلسل کامیابیوں کے بعد ٹرمپ کی ٹیم نے پریشانی میں یہ اقدام کیا ہے، کیونکہ شام اور عراق میں داعش کی ناکامی، کردستان میں ریفرنڈم کی ناکامی، یمن میں صالح کا منصوبہ ناکام ہونا، اس وجہ سے ٹرمپ نے جلدی میں ایسا فیصلہ کیا ہے۔

ٹرمپ نے قدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کر کے اسرائیل کے ساتھ خیانت کی ہے، کیونکہ ان کے اس اقدام سے اسلامی ممالک متحد ہو گئے ہیں اور یہ اسلامی دنیا کے لئے الہی تحفہ تھا، اگر اسرائیلی حکام عقلمند ہوئے تو ٹرمپ کے اس اقدام سے دور رہیں گے۔بشکریہ شفقنا نیوز

یہ بھی دیکھیں

سانحۂ قصور سے سیکھے جانے والے سبق

(ذوالفقار احمد چیمہ) قصور کی ننھی زینب معصومہ کے المناک سانحے نے بلاشبہ پوری قوم ...