جمعرات , 19 جولائی 2018

اقوام متحدہ میں اس وقت امریکہ کی نمائندہ نمریتا رندھاوا (المعروف نکی ہیلی) کی زندگی کی مختصر داستان

اصل نام:نمریتا رندھاوا
تاریخ پیدائش:20 جنوری 1972ء
جائے پیدائش:بمبیرگ،ریاست جنوبی کارولینا، امریکہ
شہریت:امریکہ ،بھارت
مذہب:مسیحیت
والد کا نام:اجیت سنگھ رندھاوا
شریک حیات :مائیکل ہیلی
بچے :2
تعلیم :کلمسن یونیورسٹی سے فارغ التحصیل ہیں

عملی زندگی:
نمریتا رندھاوا (المعروف نکی ہیلی) بھارت سے تعلق رکھنے والی امریکی سیاست دان ہیں جو امریکی ریپبلکن پارٹی سے وابستگی رکھتی ہیں۔ہیلی کے والدین کا تعلق ایک سکھ گھرانے سے ہیں جو بھارتی پنجاب کے شہر امرتسر سے کینیڈا اور پھر امریکہ ہجرت کر گئے تھے۔

12 جنوری 2011ء میں ہیلی امریکی ریاست جنوبی کارولینا کی 116 ویں گورنر بنیں اور وہ اس عہدے پر 24 جنوری 2017ء تک فائز رہیں۔

وہ پہلی خاتون ہیں جو اس منصب پر محض 42 سال کی عمر میں فائز ہوئیں ،نیز وہ امریکی تاریخ میں اب تک کم عمر ترین گورنر کے عہدے پر فائز ہونے والی شخصیت ہیں۔

علاوہ ازیں ہیلی امریکی ریاست لویزیانا کے گورنر بوبی جنڈال کے بعد دوسری بھارتی امریکی ہیں جو ریاست کے گورنر کے عہدے پر فائز ہوئیں۔

27 جنوری 2017 میں نکی ہیلی کو اقوام متحدہ میں امریکہ کی نمائندگی کیلئے مقرر کر دیا گیا،نکی ہیلی اقوام متحدہ میں امریکہ کی مقرر کردہ 29 ویں نمائندہ ہیں۔

نکی ہیلی کے حوالے سے مشہور ہے کہ وہ امریکی صدر ٹرمپ کی طرح سخت گیر،اسلام اور مسلمانوں سے نفرت کرنیوالی اور اسرائیل کی بھر پور حمایت کرنے والی شخصیت ہیں۔

نکی کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو سے بھی زیادہ اسرائیلی ہیں،شام ،ایران ،روس،فلسطین اور پاکستان کے حوالے سے نکی ہیلی ہمشیہ اقوام متحدہ میں مخالف موقف اپناتے ہوئے ان ممالک کے خلاف انتہائی سخت اور عالمی اخلاقیات کے مخالف زبان استعمال کرتے ہوئے دکھائی دیتی ہیں جسکی وجہ سے انہیں کئی مواقع پر ان ممالک کی طرف سے منہ توڑ جواب وصول ہوئے ہیں۔

دسمبر2017ء میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں بیت المقدس کو ٹرمپ کے حوالے سے اسرائیل کا دارالحکومت قراردینے کے فیصلے کے خلاف ترکی اور یمن کی طرف سے قرارداد پیش کی گئی تھی،قرار داد پر ووٹنگ سے قبل ہیلی سیخ پا ہوگئیں تھی اور ان تمام ممالک کو دھمکیاں دینے لگ گئیں جو اس قرارداد کی حمایت کرنے جارہے تھے کہ امریکہ نے ان کی امداد بند کردینی ہے۔

ٹرمپ کے فیصلے کے خلاف قرارداد منظور ہوئی اور ہیلی کو ناکامی کا سامنا ہوا ،نکی ہیلی کے حوالے سے اگر کہا جائے کہ وہ اقوام متحدہ میں ٹرمپ کی ترجمان ہیں تو بے جا نہ ہوگا ،ان کا لہجہ،طریقہ کار اور انتہاپسندی ٹرمپ جیسی ہی ہے،نکی کا شمار اس وقت امریکہ کی طاقتور ترین خواتین میں ہوتا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

بن سلمان نے آخر اپنی والدہ کو نظر بند کیوں کر رکھا ہے؟

(تسنیم خیالی) مشہور ہسپانوی اخبار’’ایل مونڈو‘‘ نے اپنی حالیہ اشاعت میں سعودی ولی عہد محمد ...