پیر , 26 اگست 2019

ایران، امریکا کی تسلط پسندانہ پالیسیوں کا مقابلہ کرتا رہے گا،سید عباس عراقچی

iran against america

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک) ایٹمی معاہدے سے ایران اور امریکا کے تعلقات کی ماہیت میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی،اسلامی جمہوریہ ایران امریکا کی تسلط پسندانہ پالیسیوں کا مقابلہ کرتا رہے گا اور امریکا بھی ایران سے اپنی دشمنی سے باز نہیں آئے گا۔ ان خیالات کا اظہار ایران کے نائب وزیر خارجہ اور سینیئر ایٹمی مذاکرات کار سید عباس عراقچی نے کیا۔ تفصیلات کے مطابق ایران کے نائـب وزیر خارجہ سید عباس عراقچی نے کہا کہ کسی بھی شعبے میں امریکا کی ہنگامہ آرائیوں پر زیادہ توجہ دینے کی ضرورت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایران کے ساتھ بینکنگ معاملات کو آسان بنانے کے لئے امریکیوں پر جو دباؤ پڑ رہا ہے اس کا اب اثر دکھائی دینے لگا ہے اور بعض یورپی ملکوں کے ساتھ سوئیفٹ سسٹم بحال ہو گیا ہے۔سید عباس عراقچی نے کہا کہ اسلامی انقلاب کی کامیابی کے بعد ایران کا ایک اقتصادی مقصد یہ تھا کہ وہ ڈالر سے اپنی وابستگی ختم کرے اور ایران کے اقتصاد کی بنیاد ڈالر کے بغیر ڈالی جائے- انہوں نے کہا کہ امریکی عدالتوں کے غیر منصفانہ فیصلوں کے پیش نظر اس ملک کے مالیاتی سسٹم میں شمولیت خطرناک ہے۔ایرانی نائب وزیر خارجہ نے کہا کہ اس کی ایک مثال امریکا کی ایک عدالت کے ذریعے ایران کے اثاثوں میں سے ایک ارب آٹھ سو ملین ڈالر نکال لینا ہے- انہوں نے کہا کہ امریکا کا یہ اقدام معاندانہ ہے اور ایران اپنے اس حق کو واپس لینے کی ہرممکن کوشش کرے گا۔

یہ بھی دیکھیں

ایران یک طرفہ طور پر ایٹمی معاہدے کی پابندی کا سلسلہ جاری نہیں رکھ سکتا، صدر حسن روحانی

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک)صدر مملکت حسن روحانی نے ایٹمی معاہدے پر عملدرآمد کی سطح میں کمی …