جمعہ , 20 جولائی 2018

تمام عبادت گاہوں میں لاؤڈ اسپیکر استعمال کرنے پر پابندی ہوگی، یوگی ادیتیہ کی ہدایت

گجرات (مانیٹرنگ ڈیسک) بھارتی ریاست اترپردیش کے وزیر اعلیٰ نے صوبے بھر میں لاؤڈ اسپیکر پر اذان دینے کی پابندی عائد کرتے ہوئے مساجد سے لاؤڈ اسپیکر اتارنے کا حکم جاری کردیا۔
تفصیلات کے مطابق بھارتیہ جنتا پارٹی کے انتہا پسند رہنماء یوگی آدیتیہ ناتھ نے اترپردیش کا وزیراعلی بننے کے بعد مسلمانوں کا جینا دوبھر کردیا، گائے کے گوشت پر پابندی اور مسلمانوں پر سرعام تشدد کے بعد اب انہوں نے اسپیکر پر اذان دینے کی پابندی بھی عائد کردی۔
بھارتی میڈیا کے مطابق اترپردیش کے وزیر اعلیٰ نے مساجد میں سرکلر بھیجا کہ 15 جنوری سے قبل مینار سے اسپیکر اتار لیے جائیں اور آئندہ اسپیکر پر اذان نہ دی جائے بصورت دیگر سخت کارروائی عمل میں لائے جائے گی۔

یوگی آدیتیہ نے یہ پابندی گزشتہ برس آلہ باد ہائی کورٹ کی جانب سے جاری ہونے والے فیصلے کی روشنی میں عائد کی جس میں تمام عوامی مقامات پر اسپیکر استعمال کرنے کی پابندی عائد کی گئی تھی۔
عدالتی فیصلے میں کہا گیا تھا کہ ’عوامی مقامات پر موجود تمام مذاہب کی عبادت گاہوں کو پابند کیا جائے کہ وہ اسپیکر استعمال نہ کریں اور نہ ہی ان مقامات پر کسی سیاسی سرگرمی جلسے ، جلوس کی اجازت دی جائے کیونکہ اس سے عوام کو تکلیف کا سامنا ہوتا ہے‘۔
ایک اور اطلاع ہے کہ وزیراعلیٰ نے صوبے بھر میں 20 جنوری کی حتمی تاریخ دیتے ہوئے متعلقہ محکموں کو ہدایت کی کہ وہ خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت سے سخت کارروائی عمل میں لائیں۔
یوگی ادیتیہ نے چار جنوری کو حکم نامہ جاری کیا جس میں ضلع مجسٹریٹ، پولیس کے اعلیٰ حکام اور صوبائی وزیرداخلہ کو حکم دیا کہ وہ عدالتی فیصلے کی روشنی میں اقدامات کرتے ہوئے 20 جنوری تک عوام کو آواز کی آلودگی سے نجات دلوائیں۔

یہ بھی دیکھیں

ٹرمپ انتخابات میں روسی مداخلت پر موقف سے پھر گئے

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) پیر کو ڈونلڈ ٹرمپ نے فن لینڈ کے دارالحکومت ہلسنکی میں اپنے روسی ...