منگل , 24 اپریل 2018

جنگ کی دستک کا جواب

(نذر حافی)

امن اور تہذیب لازم و ملزوم ہیں، انسان کی تہذیب کا پیمانہ اس کی امن پسندی ہے، کوئی شخص جتنا شدت پسند ہوتا ہے، اتنا ہی غیر مہذب بھی ہوتا۔ غیر مہذب لوگ امن پسندی کی جدوجہد کو بزدلی اور شدت پسندی کو بہادری سمجھتے ہیں، دنیا میں اپنے آپ کو سپر پاور کہنے والا امریکہ کس قدر مہذب ہے، اس کا اندازہ عراق، افغانستان اور شام کے کھنڈرات سے لگایا جا سکتا ہے۔ اس کے علاوہ ہم لوگ بحیثیت پاکستانی کتنے مہذب ہیں، اس کا بخوبی اندازہ، قبرستانوں میں بے گناہوں کی قبروں سے کیا جا سکتا ہے اور بحیثیت قوم، مسلمان اس وقت تہذیب و تمدن کے کس درجے کو چھو رہے ہیں، اس کا پتہ 14 اپریل,

2018ء کی شب سے لگایا جا سکتا ہے۔ گذشتہ ہفتے کی شب کو شام کے مقامی وقت کے مطابق تین بج کر پچپن منٹ پر امریکہ فرانس اور برطانیہ کی جانب سے مسلمان ممالک کی پشت پناہی کے سبب شام پر 110 میزائل حملے کئے گئے۔ ان حملوں کے لئے شام کے بشار الاسد پر وہی الزام لگایا گیا، جو عراق کے صدام پر لگایا گیا تھا، یعنی کیمیائی ہتھیاروں کی موجودگی کا الزام۔ الزام لگانے والے اتنی عجلت اور جلدی میں تھے کہ انہوں نے کیمیائی ہتھیاروں کی روک تھام کی عالمی تنظیم او پی سی ڈبلیو کے نمائندوں کو اپنی تحقیقات بھی مکمل کرنے کی مہلت نہیں دی۔ ان کی تحقیقات مکمل ہونے سے پہلے ہی حملہ کر دیا گیا۔

کچھ لوگ اس حملے پر افسردہ ہیں کہ یہ حملہ ایک بڑی جنگ کی دستک ہے اور کچھ اس پر خوش ہیں کہ یہ حملہ ناکام رہا جبکہ ایک طبقے کا دعویٰ ہے کہ یہ حملہ کامیاب رہا۔اگرچہ ذرائع ابلاغ کے مطابق یہ حملہ ناکام ہی رہا ہے، تاہم اس حملے میں عالمِ بشریت کے لئے کوئی اچھی خبر نہیں ہے، چونکہ حملہ بالآخر حملہ ہی ہے اور جنگ پھولوں کی مالا نہیں بلکہ آگ کا شعلہ ہوا کرتی ہے۔ اس جنگ کے آغاز پر بغلیں بجانے والوں کو یہ یاد رکھنا چاہیے کہ امریکہ و روس صرف اپنے مادی مفادات کے حصول کے لئے اس جنگ کے پارٹنر ہیں، اگر جنگ کے شعلے بھڑکتے ہیں اور امریکی و روسی مفادات کو زِک پہنچتی ہے تو کبھی,

بھی دوسروں کی خاطر امریکہ و روس اپنے ممالک کو جنگ میں نہیں دھکیلیں گے اور اس کا سارا خمیازہ مسلمان ریاستوں کو ہی بھگتنا پڑے گا۔ سعودی عرب اپنے اتحادیوں کے ساتھ یمن اور بحرین میں جس آگ کو اپنے دامن کی ہوا دے رہا ہے، وہ آگ ایک طرف اور اسرائیل کو مضبوط کرکے اپنے لئے جو شکنجہ تیار کر رہا ہے، دوسری سے طرف سعودی عرب کے مستقبل کے لئے بڑا خطرہ ہے۔ اس خطرے کا اندازہ اس سے بھی لگا لیجئے کہ 14 مئی 1948ء کو جیسے ہی تل ابیب ریڈیو سے اسرائیلی رہنما بن گوریان نے اسرائیل کی آزادی کا اعلان نشر کیا تھا تو فوراً بلا فاصلہ سب سے پہلے امریکہ نے اسے آزاد ملک کے طور پر,

تسلیم کیا تھا۔ بعد ازاں ایک صحافی نے امریکی صدر ہیری ٹرومین سے سوال کیا کہ ہمیں اسرائیل کو تسلیم کرنے کی اتنی جلدی کیا تھی کہ ہم نے یہ بھی نہیں سوچا کہ اس سے دس کروڑ عرب ہم سے ناراض ہوجائیں گے!امریکی صدر نے برجستہ جواب دیا کہ میرے حلقہ انتخاب میں عرب نہیں بستے یعنی مجھے 60 لاکھ یہودیوں نے ووٹ دے کر صدر بنایا ہے، دس کروڑ عربوں نے نہیں۔ یہ بڑی طاقتوں کی مشترکہ نفسیات ہے، انہیں اکثریت و اقلیت، جمہوریت اور انسانی حقوق وغیرہ کے بجائے صرف اپنے مفادات عزیز ہوتے ہیں۔

یہ بات اپنی جگہ پر درست ہے کہ اسرائیل تقریباً چار مرتبہ عرب ممالک کو شکست دے چکا ہے، لیکن یہ بھی پتھر پر لکیر ہے کہ خود اسرائیل وقت آنے پر ایران اور شام سے ایک شکست بھی افوررڈ نہیں کرسکتا اور اس وقت سعودی عرب جو وہابی ازم کے بعد لبرل ازم کے ذریعے اسرائیل اور یورپ کا سہارا لینا چاہتا ہے، اسے یہ نوشتہ دیوار ابھی سے پڑھ لینا چاہیے کہ روس اگر اپنے مفادات کے پیشِ نظر شام سے نکل بھی جائے تو ایران کبھی بھی شام کو میدانِ جنگ میں تنہا نہیں چھوڑے گا جبکہ امریکہ و اسرائیل کبھی بھی مشکل وقت میں سعودی عرب کے کام نہیں آئیں گے۔ سعودی عرب پہلے بھی اس تلخ حقیقت کو چکھ چکا ہے.

کہ امریکہ اور یورپ نے وہابی مدارس، داعش، القاعدہ اور طالبان کو صرف اپنے مفاد کے لئے استعمال کیا ہے اور بے شک آج شام پر ایک سو دس میزائل داغے گئے ہیں، لیکن اگر ایران اور شام کی طرف سے جنگ کی اس دستک کا جواب دیا گیا تو پھر سعودی عرب یاد رکھے کہ امریکہ کبھی بھی نقصان کے سودے میں حصہ دار نہیں بنتا۔

یہ بھی دیکھیں

ایران کا ممکنہ جوابی حملہ اسرائیلی خوف ہے یا پھر خواہش ۔۔؟

شام کے ٹی فور ائرپورٹ پر جب سےسات ایرانی آفیسرز اسرائیلی طیارے کے ذریعے سے ...