جمعرات , 19 جولائی 2018

میرظفراللہ جمالی کاقومی اسمبلی کی رکنیت سے مستعفی ہونے کا اعلان

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) مسلم لیگ (ن)کے رہنماء میرظفراللہ جمالی نے قومی اسمبلی کی رکنیت سے مستعفی ہونے کا اعلان کردیا ۔بدھ کو اسپیکر ایازصادق کی زیرصدارت قومی اسمبلی کے اجلاس میں سابق وزیراعظم میر ظفراللہ جمالی نےبجٹ پراظہارخیال کرتے ہوئے کہا کہ بجٹ میں بلوچستان کو نظر اندازکیا گیا ،بجٹ کارروائی روکنی چاہیے، بجٹ دوست کے داماد نے پیش کیا جو کراچی میں نوازشریف وزیرخزانہ کے گھرسے جاتا ہے ۔ انہوں نے مزید کہاکہ اسمبلی میں جھوٹ بولا گیا ،اداروں کوبرا بھلا کہا جا رہا ہے ۔

اسپیکرنے کسی کو سزا نہیں دی آئین توڑنے والوں کوپھانسی لگانے کی جرت کریں ،موجودہ صورتحال کے تناظرمیں قومی اسمبلی کی رکنیت سے مستعفی ہو رہا ہوں ۔ شیریں مزاری نے الیکٹرانک میڈیا سے صحافیوں کی نوکریوں سے نکالے جانے کا معاملہ اٹھاتے ہوئے کہا کہ الیکٹرانک میڈیا میں صحافیوں کوریگولیٹ کرنے کیلئے حکومت نے کوئی ادارہ نہیں بنایا گیا ۔

شیریں مزاری کی توجہ دلانے پراسپیکر نے وفاقی وزیرریاض پیرزادہ کو صحافیوں کے تحفظات سننے کی ہدایت کی ۔مولانا فضل الرحمان نے خطاب میں کہا کہ آئی ایم ایف، عالمی بینک اورعالمی ادارے پاکستان ہم جنس پرستی کے قانونی بنانے کیلئے دباؤ ڈالا رہے ہیں ، ایٹم بم کے استعمال کا حق چھینا جا رہا ہے ، فوجی آپریشنزکا عمل بھی عالمی دباؤکا نتیجہ ہی ہے۔

مولانا فضل الرحمان نے مزید کہاکہ فاٹا میں لوگوں کوغیرمسلح کردیا گیا جس کے بعد کچھ لوگ گھروں میں جا کرٹارگٹ کلنگ کررہے ہیں فاٹا اصلاحات پر بات کرتے ہوئے ۔

ان کا کہنا تھاکہ فاٹا کے معاملے میں جلدبازی اور کشمیر پرسستی ہے ملکی حالات ایسے نہیں کہ فاٹا کو آئینی حیثیت کو چھیڑاجائے ، فاٹا کابل قائمہ کمیٹی برائے قانون وانصاف کو بھیجنے پراحتجاج کرتے ہیں ۔

یہ بھی دیکھیں

امریکی صدر کی ایرانی صدر سے ملاقات کے لئے آٹھ بار درخواست

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک)اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر کے آفس کے انچارج نے کہا ہے کہ ...