بدھ , 24 اکتوبر 2018

کیا آب زم زم کا ذائقہ بدل گیا ہے؟

(تسنیم خیالی)
سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن العزیر آل سعود نے مسجد حرام اور مسجد نبوی پر متعین انچارج شیخ عبدالرحمٰن بن عبدالعزیر السدیس سے کہا ہے کہ وہ ’’آب زم زم کی کوالٹی کو برقراررکھنے کےلئے ٹھوس اقدامات اٹھائیں کیونکہ انہیں ایسا لگ رہا ہے کہ آب زم زم کے ذائقے میں فرق آگیا ہے‘‘ میرے خیال میں شاہ سلمان جھوٹ نہیں بھول رہے اور آب زم زم کا ذائقہ واقعی میں بدل ہو گیا ہوگا کیونکہ آل سعود کی حرکتیں ہی ایسی ہیں، سوشل میڈیا پر بھی شاہ سلمان کی بات پر کافی ردعمل سامنے آیا ہے اور سبھی نے آب زم زم کے ذائقے میں فرق کی ذمہ داری آل سعود پر عائد کردی ہے، آپ زم زم کو بہتے ہوئے صدیاں گزر چکی ہیں اور سرزمین حجاز پرکئی حکومتیں آئیں اور کئی رخصت ہوئیں مگر کسی حکمران نے یہ نہیں کہا کہ اسے آب زم زم کے ذائقے میں فرق محسوس ہوا، شاہ سلمان کے اقتدار میں آنے کے بعد آل سعود کی رہی سہی کسر بھی پوری ہوگئی، انہوں نے وہ تمام حدیں پار کردیں جو ان سے پہلے آل سعود حکمران پار کرنے سے کتراتے تھے، شاہ سلمان اور ان کے بیٹے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے امت مسلمہ کے ساتھ وہ خیانت کی ہے جو تاریخ میں نہیں ملتی اور جسے مسلمان صدیوں تک یاد رکھیں گے، سلمان اور بن سلمان نے قبلہ اول کو صہیونیوں کے حوالے کردیا ہے جس کے بعد باشعور مسلمان کو قبلہ دوم کی فکر لاحق ہوگئی ہے بن سلمان نے ہی امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ کو امریکی سفارت خانہ بیت المقدس منتقل کرنے کے لئے گرین سگنل دیا تھا اور بن سلمان ہی مسئلہ فلسطین کے حل کےلئے فلسطینیوں کے ساتھ دھوکہ کرتے ہوئے صدی کی امریکی ڈیل میں کلیدی کردار ادا کررہے ہیں موصوف یہ کہتے ہیں کہ فلسطین کی سرزمین پر صہیونیوں کا پورا حق ہے اور انہیں انکا حق ملنا چاہیے آج فلسطین میں مارے جانے والے فلسطینی بھی آل سعود کے موجودہ حکمرانوں کی وجہ سے ہی مارے جارہے ہیں ان حکمرانوں کی فلسطینیوں کے حق میں خاموش اور لاپروا ہی میں صہیونیوں کےلئے گرین سگنل ہے۔

آل سعود نےیمنیوں کا خون بے دریغ بہایا ہیں۔
آل سعود سعودروہنگیا مسلمانوں کے خلاف ہونے والے مظالم پر اپنے مفادات کو دیکھتے ہوئے خاموش ہیں۔
آل سعود امریکہ اور اسرائیل کے ساتھ متحد ہوکر مسلمانوں کے خلاف لڑرہے ہیں ۔
آل سعود دیگر تمام اسلامی مکاتب فکر کو غلط اور صرف اپنے مسلک (وہابیت) کو درست قرار دیتے ہیں۔
آل سعود نے حرمین مسلمانوں کے قتل عام کے لئے استعمال کررہے ہیں۔
آل سعود نے جہاد کے مقدس فریضے کے نام پر القاعدہ اور داعش جیسی دہشت گرد تنظیمیں قائم کیں۔
آل سعود نے عراق کو امریکہ کے ساتھ مل کر برباد کیا۔
آل سعود نے امریکہ اور اسرائیل کا ساتھ دیتے ہوئے شام کو تباہ کیا۔

دنیا بھر میں جہاں جہاں مسلمان آج قتل ہورہے ہیں اسکا ذمہ دار آل سعود ہے اور جہاں جہاں فرقہ ورایت ہورہی ہے وہاں بھی آل سعود کا ہاتھ ہے۔ آل سعود کے ’’کارناموں‘‘ کی یہ فہرست بہت طویل ہے اور دن بدن اس فہرست میں کارناموں کا اضافہ ہوتا جارہا ہے، ان کارناموں کی وجہ سے ہی آج یہ بات ہوئی ہے کہ آب زم زم کا ذائقہ بدل گیا ہے۔

شاہ سلمان کو کوئی یہ تو بتائے کہ ’’بادشاہ سلامت آب زم زم میں فلسطینی ، یمنی، شامی، بحرینی، سعودی، عراقی ، روہنگیائی اور نا جانے کن کن مسلمانوں کا خون شامل ہوچکا ہے جو آپ اور آپ کی آل واولادکے ہاتھوں بہ چکا ہےاور آج بھی بہ رہا ہے‘‘۔

کہا جاتا ہے کہ خانہ کعبہ میں لگا ’’حجراسود‘‘ شروع میں سفید تھااور وقت کے ساتھ ساتھ گناہ گار لوگوں کے ہاتھ لگنے سے کالا ہوا، آب زم زم کا ذائقہ بھی اب آل سعود کے گناہوں سے بدل رہاہے۔

یہ بھی دیکھیں

کیا آل سعود 9 ستمبر کے واقعہ کی طرح خاشقجی کے معاملے سے بچ پائے گی؟

عبدالباری عطوان (ترجمہ تسنیم خیالی) خاشقجی کے قتل کے معاملے کے حوالے سے سعودی عرب ...