جمعہ , 22 جون 2018

ٹرمپ نے غلطی کردی ہے

(تسنیم خیالی)
امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ نے اقتدارسنبھالنے کے بعداپنے فیصلوں سے پوری دنیا میں امریکہ کی ساکھ بری طرح سے متاثر کردی ہے خود امریکی بھی اس بات کا اعتراف کررہے ہیں کہ ٹرمپ نے امریکہ کا ’’بیڑہ غرق کردیا ہے‘‘ خواہ وہ اندرونی سطح پر ہو یا خارجی، ٹرمپ کا سب سے خطرناک فیصلہ ایرانی جوہری معاہدے سے امریکہ کی دستبرداری کا فیصلہ ہے ،اس فیصلے کے اثرات نا صرف امریکہ بلکہ پورے یورپ اور مغربی دنیا پر پڑسکتے ہیں اور جو ٹرمپ اور اس کے ساتھیوں نے سوچا اس کے برعکس سب کچھ ہونے کا بڑا مکان ہے، ٹرمپ کی سوچ کے مطابق ایران پر سخت پابندیاں عائد کرنے سے ایرانی عوام سڑکوں پر نکل آئے گی اور حکومت کو بدل دے گی، ویسے تو ایرانی عوام نے ٹرمپ کی اس حرکت کے بعد حکومت کو بدلنا ہے مگر سڑکوں پر آکر نہیں بلکہ ووٹ دیکر!! جی ہاںٹرمپ کی جوہری معاہدے سے دستبرداری کے بعد قوی امکان ہے کہ ایرانی عوام ٹرمپ کو منہ توڑ جواب دینے کےلئے دائیں بازو کی جماعتوں کی حکومت کو اقتدار میں لائیں گےیعنی حسن روحانی کی حکومت کے اختتام کے بعد حکومت نظریات اور مغرب سے محتاط رہنے والی جماعت نے کرنی ہے جو مغرب کی ایک بھی نہیں مانے گی جیسا کہ روحانی سے قبل احمدی نثراد نے کیا۔

دراصل بات یہ ہے کہ حسن روحانی اور ان کی کابینہ مغرب اور امریکہ کے ساتھ نرمی سے پیش آرہے تھے حالانکہ ایران میں دائیں بازو کی جماعتوں نے جوہری معاہدے پر بھی اعتراض کرتے ہوئے حسن روحانی کو نصیحت کی تھی کہ امریکہ اور یورپ کے ساتھ جوہری معاہدے طے نہ کرے کیونکہ یہ لوگ قابل اعتماد نہیں اور کسی بھی وقت اپنے اس معاہدے سے پھر سکتے ہیں اور یہی بات انہی جماعتوں نے ایرانی عوام کو بھی سمجھائی، امریکہ کی معاہدے سے دستبرداری کے بعد ایرانی عوام کے نزدیک امریکہ نے ان کے ساتھ بہت بڑا دھوکہ کیا ہے اور ان کے اعتماد کو مجروح کیا ہے، لہٰذا ٹرمپ نے غلط اندازہ لگاتے ہوئے ایرانی حکومت نہیں بلکہ ایرانی عوام سے دشمنی مول لےلی ہے اب ایرانی عوام ایسی چال چلے گی کہ امریکہ سمیت مغربی ممالک کو ایک زور دار جھٹکا لگے گا جس کے بعد امریکہ نرمی دکھاتے ہوئے ایران کے ساتھ بات چیت کی خواہش کا اظہار کرے گا مگر اس وقت حسن روحانی جیسی شخصیت اقتدار میں نہیں ہوگی بلکہ سخت گیر شخصیت ہوگی جو امریکیوں سے معاہدہ تو دور کی بات مذاکرات کرنے پر بھی آمادہ نہیں ہوگی تب مغرب بالخصوص امریکہ کوحسن روحانی اور انکی کابینہ یادآئیں گے۔

ٹرمپ اور اس کے ساتھی آج کل ایران کے خلاف جوش وخروش سے بول رہے ہیں، دھمکیاں دے رہے ہیں مگر وہ وقت بھی جلد آجائے گا جس میں ایرانی بولیں گے اور امریکی دنگ رہ جائیں گے۔

یہ بھی دیکھیں

ہتھیار ڈال کر سر تسلیم خم کرنا انصار اللہ کی قاموس میں نہیں پایا جاتا: عطوان

خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، عالم عرب کے مشہور صحافی عبدالباری عطوان نے ...