منگل , 21 اگست 2018

جنرل قاسم سلیمان کا سعودی عرب کو انتباہ

(تسنیم خیالی)
لبنان کے پارلیمانی انتخابات میں حزب اللہ کی بڑی کامیابی لبنان کی تاریخ میں ایک بہت بڑا واقعہ ہے اور لبنان کے مستقبل کیلئے انتہائی اہمیت کا حامل ہے، اس کامیابی کے حوالے سے پاسداران انقلاب اسلامی ایران کی القدس بریگیڈکے سربراہ جنرل قاسم سلیمانی کا کہنا تھا کہ لبنان میں ہونے والے انتخابات عوامی ریفرنڈم کا مقام رکھتے ہیں جس میں حزب اللہ کی کامیابی نے اسے مزاحمتی سیاسی جماعت بھی بنادیا ۔

سعودی عرب کے حوالے سے جنرل قاسم سلیمانی نے انکشاف کیا ہے کہ سعودی نظام نےلبنانی انتخابات اور نئی لبنانی حکومت کی تشکیل پر کافی حد تک اثرانداز ہونے کی کوشش کی تھی اور اس غرض کیلئے سعود ی عرب نے 200 ملین ڈالر کی خطیر رقم بھی صرف کردی اسکے باوجود لبنانی دارلحکومت بیروت میں سب سے پہلے نشست حاصل کرنے والا امیدوار حزب اللہ ہی کا تھا وہ حزب اللہ جسے سعودی عرب اور اس کے اتحادی دہشت گرد، غیر قانونی اور فساد کی جڑ قرار دیتے آرہے ہیں، سلیمانی کے بقول خلیج کونسل کے ممالک بالخصوص سعودی عرب جاہل ممالک ہے اور ان ممالک پر جاہل حکام مسلط ہیں جو حزب اللہ اور سربراہ سید حسن نصراللہ کے خلاف’’ پروپیگنڈا‘‘ کرتے آرہے ہیں۔

جنرل قاسم سلیمانی کہتے ہیں کہ لبنان جیسے چھوٹے سے ملک کے انتخابات میں 200 ملین ڈالرز کی انویسمنٹ کرنا معمولی بات نہیں، البتہ نتیجہ کیا نکلا ، سعودی اپنے پیسے کے بل بوتے پر کچھ نہیں کرپائے کوئی کامیابی حاصل نہیں کی، الٹا انتخابات کے نتائج سعودیوں کیلئے صدمے کا باعث بن گئے، جنرل قاسم سلیمانی کی باتوں سے یوں لگ رہاہے کہ وہ سعودی نظام کو مخاطب کرتے ہوئے اسے متنبہ کررہے ہیں کہ صرف پیسوں سے فتح حاصل نہیں کی جاتی ، ویسے تو عام طور پر دیکھا جائے تو سعودی حکام کو اپنی دولت پر بڑا غرور ہے، اور ان کے نزدیک وہ ہر معاملہ پیسوں کے ذریعے حل کر سکتے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

عربی نیٹو، ممکن یا ناممکن؟

(تحریر: بہارہ سلطان پور) مصر کے شہر شرم الشیخ میں منعقدہ عرب لیگ کے 26 ...