پیر , 16 جولائی 2018

نواز شریف کی وطن واپسی :لیگی کارکنوں کیخلاف کریک ڈاؤن، 120 سے زائد گرفتار

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) سابق وزیراعظم نواز شریف اور مریم نواز کل وطن واپس آ رہے ہیں۔لاہور کے طول عرض میں کریک ڈاؤن, گھر گھر چھاپے مارے گئے۔ لاہور پولیس نے 120سے زائد ن لیگی کارکنوں اوربلدیاتی نمائندوں کو گرفتار کر لیا.

پی پی 166سے ن لیگ کے امیدوار رمضان صدیق بھٹی، یونین کونسل236کے چیئرمین تنویر نثار گجر، یونین کونسل164کے چیئرمین رفیق نمبردار، یونین کونسل 36کے وائس چیئرمین ملک شفیع، یونین کونسل17 کے وائس چیئرمین عمر فاروق، یونین کونسل58کے چیئرمین شہاب بشارت سمیت پولیس نے120سے زائد افراد کو حراست میں لیا۔

پولیس نے ڈپٹی میئرلاہور مشتاق مغل، یونین کونسل140کے چیئرمین ملک ریاض، یونین کونسل223کے چیئرمین مرتضیٰ نت، یونین کونسل235کے چیئرمین آصف خان میو، یونین کونسل26کے وائس چیئرمین جاوید اقبال، یونین کونسل154کے وائس چیئرمین اعجاز چن، یونین کونسل141کے وائس چیئرمین سلیم اعوان سمیت جنرل کونسلرز اور اہم عہدیداروں کے گھر پر چھاپے بھی مارے.

پولیس تھانہ گرین ٹاؤن نے لارڈ میئر کرنل ریٹائرڈ مبشر جاوید کو کارکنوں سےملاقات بھی نہ کرنے دی۔ کرنل مبشر جاوید کو تھانے کے باہر سے ہی چلتا کیا۔ذرائع کے مطابق گرفتار افراد کو کوٹ لکھپت جیل منتقل کیا جائے گا۔ لاہور پولیس کو300سے زائد ن لیگی کارکنوں کو گرفتار کرنے کا ٹاسک دیا گیا ہے۔

خواجہ سعد رفیق نے ن لیگی کارکنوں کی گرفتاریوں کو اوچھے ہتھکنڈے قرار دیا۔ان کا کہنا ہے کہ ن لیگی کارکن پرامن رہیں گے۔قائد کے استقبال سے کوئی نہیں روک سکتا۔سابق اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے تمام تر صورت حال کا ذمہ دار پنجاب کی نگران حکومت کو ٹھہرایا۔انھوں نے کہا کہ ساٹھ دن کی حکومت کو ایسے کام زیب نہیں دیتے۔پریس کانفرنس کے آخر میں ن لیگ لاہور کے صدر پرویز ملک نے مل بیٹھ کر معاملات حل کرنے کا مشورہ دیا۔ خواجہ عمران نذیر کا کہنا ہے کہ گرفتاریوں سے ڈرنے والے نہیں، جو مرضی ہو جائے شیر دھاڑے گا ، کارکنان کو آزاد نہ کیا گیا تو شہر میں کچھ نہیں چلے گا۔

پولیس ذرائع نے کہا ہے کہ لیگی عہدیداروں اور بلدیاتی نمائندوں سے شورٹی بانڈز لینے کو کہا گیا تھا۔ شورٹی بانڈز سے انکار کرنے والے 300 افراد کی گرفتاری کے احکامات جاری کیے گئے ہیں۔ رات گئے تک لیگی عہدیداروں کو حراست میں لینے کا سلسلہ جاری تھا۔دوسری جانب انتظامیہ کی جانب سے مسلم لیگ ن کا کاررواں روکنے کے لیے کنٹینرز منگوا لیے گئے ہیں۔ دیکھتے ہیں اب یہ اونٹ کس کروٹ بیٹھے گا۔

 

یہ بھی دیکھیں

سانحہ مستونگ کے شہداء کی تعداد 149 ہو گئی

کوئٹہ (مانیٹرنگ ڈیسک) دو روز قبل مستونگ میں ہونے والے خود کش دھماکے میں شہید ...