منگل , 20 نومبر 2018

القدس کی اراضی اور املاک دشمن کو فروخت کرنا ’حرام‘ ہے: مفتی اعظم

مقبوضہ بیت المقدس (مانیٹرنگ ڈیسک)القدس اور دیار فلسطین کے مفتی اعظم الشیخ محمد حسین نے ایک فتویٰ جاری کیا ہے جس میں انہوں نے القدس کے کسی بھی حصے کو کسی غیرفلسطینی یا غیرمسلم کی ملکیت میں دینےاور اس کی سہولت کاری کو حرام قرار دیتے ہوئے فلسطین پرحملے سے تعبیر کیا ہے۔خیال رہے کہ فلسطین کے مفتی اعظم کی طرف سے فتویٰ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری جانب اسرائیلی حکومت مقبوضہ مغربی کنارے اور القدس کی اراضی پر یہودیوں کو مالکانہ حقوق کے دینے کے لیے قوانین سازی پر غور کررہی ہے۔

فلسطینی دار الافتاء کی طرف سے مفتی اعظم کے دستخطوں سے جاری شدہ فتوے میں کہا گیا ہے کہ ’ارض فلسطین خراجی اور وقف املاک میں شامل ہے جس کی دشمنوں کو خریدو فروخت شروع حرام ہے۔

فتوےمیں کہا گیا ہے کہ القدس کی اراضی دشمنوں کو دینے والا گناہ گار ہوگا۔ اراضی کی فروخت کے عوض معاوضہ لینے والے بھی گناہ گار ہوں گے کیونکہ فلسطینی اراضی کے کسی ٹکڑے کو دشمن کو شرعا فروخت نہیں کیا جا سکتا ہے۔

فتوے میں کہا گیا ہے کہ دشمنوں فلسطینی اراضی کا مالک بنانے میں مدد کرنا کفار کے ساتھ وفاداری اور اسلام و فلسطینی قوم کے ساتھ بد عہدی تصور کی جائے گی۔ ایسے لوگ ملت اسلام سے خارج، اسلام کے دشمن، اللہ اور اس کے رسول کے خائن اور دین اور وطن کے لیے باعث عار ہوں گے۔

مفتی اعظم نے عالم اسلام پر زور دیا کہ وہ دشمنوں کا ہرسطح پر بائیکاٹ کریں، ان کے ساتھ لین دین ختم کریں، دشمن کے ساتھ ساز باز کرنے والوں کا بھی بائیکاٹ کریں۔ ایسے منافقوں کی نماز جنازہ میں شریک نہ ہوں اور نہ ہی انہیں مسلمانوں کے قبرستانوں میں دفن کریں۔

یہ بھی دیکھیں

خیبر پختونخوا میں میڈیکل تعلیم کا حال سب سے برا ہے، سپریم کورٹ

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ نے دو کالجز میں داخلوں پر پابندی لگاتے ہوئے کہا ...