ہفتہ , 20 اکتوبر 2018

ہندوستان کو جرمنی کا مشورہ

برلن (مانیٹرنگ ڈیسک) جرمنی کے وزیر داخلہ نے ہندوستان کو، ایران کے بارے میں امریکی دباؤ کے مقابلے میں پائمردی کا اظہار کرنے کی ترغیب دلائی ہے۔ جرمنی کے وزیر داخلہ نیلز آنن نے سی این این نیوز-18 سے گفتگو میں کہا کہ ایران کے بارے میں پابندیوں کے نفاذ کے لئے امریکا کی جانب سے اپنے اتحادیوں پر دباؤ، غضبناک قدم ہے۔

انہوں نے کہا کہ جرمنی اس حوالے سے اپنے مفاد کی بنیادوں پر فیصلہ کرے گا اور امید ہے کہ ہندوستان بھی ایران سے تیل کی خریداری جاری رکھے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ ہندوستان کی خودمختاری سے وابستہ فیصلہ ہے، میں ایران کا سیلز مینیجر نہیں ہوں لیکن مجھے یہ لگتا ہے کہ ہندوستان، ایران سے تیل کی خریداری جاری رکھنا چاہتا ہے اور یہ بہت اہم پیغام ہو گا۔ ہندوستان، ایران کے تیل کا دوسرا سب سے بڑا خریدار ہے۔

درایں اثنا ہندوستان کے خارجہ امور کے وزیر وی کے سنگھ نے ایران اور ہندوستان کے تعلقات پر امریکا کے اثرات کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ہندوستان، ایران کے ساتھ اپنے تعلقات میں مستقل ہے۔

ایران سے تیل کی خریداری بند کرنے کے لئے نئی دہلی پر واشنگٹن کی جانب سے بڑھتے دباؤ کے ساتھ ہندوستان کے خارجہ امور کے وزیر وی کے سنگھ نے کہا کہ ہندوستان اور ایران کے تعلقات دیرینہ ہیں اور اس کا کسی تیسرے ملک سے کوئی واسطہ نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان اور ایران توانائی کے شبعبے میں تعاون میں توسیع اور طولانی تعاون کے لئے کوشش کر رہے ہیں۔

اس سے پہلے ہندوستان کے وزیر پٹرولیم دھرمیندر پردھان بھی کہہ چکے ہیں کہ ہندوستان، ایران سے تیل خریدنے کے بارے میں فیصلہ اپنے قومی مفاد کی بنیاد پر کرے گا۔ دھرمیندر پردھان نے
کہا کہ ہندوستان، ایران کے خلاف امریکی پابندیوں کو ایک چیلنج کی طرح دیکھتا ہے کیونکہ ایران کے ساتھ نئی دہلی کے اسٹرٹیجک تعلقات ہیں۔

ہندوستانی حکام کے اس طرح کے بیانات کے ساتھ ہی یہ خبر بھی موصول ہو رہی ہے کہ تیل ریفائنری کارخانوں کو آمادہ رہنے کو کہہ دیا گیا ہے۔ گزشتہ مہینے ایران سے ہندوستان کی تیل برآمد کم ہونے کی رپورٹ بھی موصول ہوئی تھی۔

یہ بھی دیکھیں

ساڑھے تین منٹ میں 300 فلسطینیوں کو شہید کر دیا تھا: ایہود باراک

یروشلم (مانیٹرنگ ڈیسک) اسرائیل کے سابق وزیراعظم اور وزیر دفاع ایہود باراک نے فخریہ انداز ...