بدھ , 21 نومبر 2018

خاشقجی کی گمشدگی: ترک پولیس کی’ جنگل میں تلاش

اطلاعات کے مطابق ترکی میں سعودی صحافی جمال خاشقجی کے مبینہ قتل کی تحقیقات کرنے والی پولیس نے تلاش کا دائرہ بڑھا دیا ہے۔ ترک حکام کا کہنا ہے کہ ایسا ہو سکتا ہے کہ ان کی لاش کو قریبی جنگل یا کھیتوں میں ٹھکانے لگایا گیا ہو۔

جمال خاشقجی دو اکتوبر کو استنبول میں سعودی قونصل خانے میں گئے تھے اور اس کے بعد سے لاپتہ ہیں‌ جبکہ ترک حکام کا الزام ہے کہ انھیں قتل کر دیا گیا ہے۔ سعودی عرب ان الزامات کی تردید کرتے ہوئے جمال خاشقجی کے بارے میں لاعلمی کا اظہار کرتا ہے۔ رواں ہفتے سعودی قونصل خانے اور قونصل جنرل کی رہائش گاہ سے حاصل کیے گئے نمونوں کا موازنہ جمال خاشقجی کے ڈی این اے سے کیا جائے گا۔

دوسری جانب جمعرات کو سینیئر ترک حکام نے اے بی سی نیوز کو امریکی سیکریٹری خارجہ مائیک پومپیو نے صحافی کے مبینہ قتل کے ایک آڈیو ریکارڈنگ سنی ہے۔ ترکی کا اس سے پہلے کہنا تھا کہ اس کے پاس جمال خاشقجی کے قتل کے آڈیو اور ویڈیو ثبوت موجود ہیں تاہم تاحال یہ سامنے نہیں لائے گئے۔ جمال خاشقجی کی گمشدگی سے ریاض اور اس کے مغربی اتحادیوں کے درمیان کشیدگی پیدا ہوئی ہے۔ امریکی سیکریٹری خزانہ سٹیون منوچن اور برطانیہ کے سیکریٹری برائے عالمی تجارت لیئم فاکس نے آئندہ ہفتے ریاض میں منقعد ہونے والی سرمایہ کاری کانفرنس میں شرکت سے انکار کر دیا ہے۔

اس کانفرنس کی میزبانی ولی عہد محمد بن سلمان اپنی اصلاحاتی ایجنڈے کی ترویج کے لیے کر رہے ہیں۔ تاہم پیپسی اور ای ڈی ایف سمیت دیگر کئی بڑی کاروباری کمپنیاں بائیکاٹ کے دباؤ کے باوجود اس کانفرنس میں شرکت کرنے کا ارادہ رکھتی ہیں۔ حکومت کے قریب سمجھے جانے والے ترک میڈیا نے اس مبینہ آڈیو کے بارے میں دلخراش تفصیلات شائع کی ہیں۔ ترک ذرائع ابلاغ کے مطابق اس ریکارڈنگ میں کونسل جنرل محمد ال اُطیبی کے چلانے کی آواز سنی جا سکتی ہے۔

ترک حکومت نواز اخبار ینی شفق کے مطابق سعودی قونصل استنبول بھیجے جانے والے مبینہ سعودی ایجنٹس کو کہتے ہیں کہ ‘یہ باہر جا کر کرو۔ تم مجھے مشکل میں ڈال دو گے۔’ ترک ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے انھوں نے مشتبہ سعودی ایجنٹس کی اس 15 رکنی ٹیم کی شناخت کر لی ہے جو جمال خاشقجی کی گمشدگی کے روز استنبول آئے اور واپس گئے تھے۔

دوسری جانب سعودی عرب کا کہنا ہے کہ جمال خاشقجی کی موت کے بارے میں میں رپورٹس ‘بالکل جھوٹ اور بے بنیاد’ ہیں اور وہ حقائق کا کھوج لگانے کے لیے ‘تعاون کے لیے تیار ہے۔’ خیال رہے کہ انسانی حقوق کی اہم تنظیموں نے بھی ترکی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ جمال خاشقجی کے ممکنہ قتل کی تحقیقات کے لیے اقوام متحدہ سے مطالبہ کرے۔(بشکریہ بی بی سی)

یہ بھی دیکھیں

امریکہ دنیا میں سب کا ہمسایہ ہے

(محمد مہدی)  امریکہ میں وسط مدتی انتخابات کے انعقاد کے ساتھ ہی امریکی سیاست اور ...