پیر , 19 نومبر 2018

فلسطینی طالبہ کی جیت: اسرائیلی یونیورسٹی کے ماسٹرز پروگرام میں داخلہ مل گیا

 

یروشلم (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی طالبہ لارا القاسم نے دو ہفتوں سے اسرائیلی ایئرپورٹ پر پھنسے رہنے کے بعد اسرائیل میں داخل ہونے اور تعلیم جاری رکھنے سے متعلق مقدمہ جیت لیا۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق فلسطینی نژاد امریکی طالبہ لارا القاسم کو اسرائیلی یونیورسٹی کے شعبہ انسانی حقوق میں ماسٹرز پروگرام میں داخلہ مل گیا تھا اور وہ پہلے سیشن میں شرکت کے لیے دو ہفتے قبل اسرائیل پہنچی تھیں تاہم طالبہ کو بن گوریان ایئرپورٹ پر روک کر واپس جانے کا حکم دیا گیا تھا۔

اسرائیلی حکومت کی جانب سے طالبہ پر الزم عائد کیا گیا تھا کہ وہ فلوریڈا یونیورسٹی میں تعلیم کے دوران ’ انصاف برائے فلسطین ‘ نامی تنظیم کی صدر رہیں اور اپنی صدارت کے دوران اسرائیل مخالف مہم بی ڈی ایس ( BoyCott Divestment and Sanction Movement ) کا حصہ بھی رہی ہیں۔

فلوریڈا سے اسرائیل پہنچنے والی 23 سالہ طالبہ نے غیرمنصفانہ فیصلے کے خلاف اسرائیلی سپریم کورٹ سے رجوع کیا جہاں انصاف کے حصول کے لیے دو ہفتے لگ گئے تاہم خوش آئند بات یہ ہے کہ عدالت نے طالبہ کی درخواست قبول کرتے ہوئے اسرائیل میں داخل ہونے اور تعلیم جاری رکھنے کی اجازت دے دی۔

ہیبریو یونیورسٹی نے عدالتی فیصلے پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہم اپنی نئی طالبہ کو خوش آمدید کہتے ہیں اور امید ہے کہ وہ آئندہ ہفتے انسانی حقوق اور عبوری انصاف میں ماسٹرز کے لیے شروع ہونے والی کلاسوں میں شرکت کریں گی۔

یہ بھی دیکھیں

نوجوان خواتین ہارٹ اٹیک کا زیادہ شکار ہونے لگیں

لندن (مانیٹرنگ ڈیسک)اگرچہ ماضی میں خیال کیا جاتا تھا کہ دل کا امراض عمر رسیدہ ...