جمعہ , 23 اپریل 2021

سعودیہ بیلسٹک میزائل کی تیاری میں لگا ہے، امریکی جوہری ماہرین کا دعویٰ

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی جوہری ماہرین نے دعویٰ کیا ہے کہ سعودی عرب بیلسٹک میزائل تیار کررہا ہے جس کے سیٹیلائیٹ شواہد موجود ہیں۔غیرملکی خبرساں ادارے کے مطابق امریکی جوہری ماہرین نے سیٹلائیٹ شواہد کی بنیاد پر دعویٰ کیا ہے کہ سعودی عرب بیلسٹک میزائل کی تیاری میں مصروف عمل ہے۔

واشنگٹن پوسٹ کی جانب سے جاری کردہ تصاویر میں یہ دکھایا گیا ہے کہ ریاض سے 230 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع قصبے الدوادمی میں قائم فوجی اڈے کو دکھایا گیا ہے۔واشنگٹن پوسٹ کی جانب سے جاری کی گئی نومبر میں لی گئی تصاویر میں بیلسٹک میزائل کی تیاری کا ایک سلسلہ نظر آرہا ہے۔

رپورٹ کے مطابق سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے کہا تھا کہ اگر ایران جوہری ہتھیاروں کی تیاری جاری رکھتا ہے تو سعودی عرب بھی ایسے ہتھیاروں کی تیاری شروع کرسکتا ہے جس سے محسوس ہوتا ہے کہ سعودی عرب جوہری ہتھیاروں کی تیاری شروع کررہا ہے۔

دوسری جانب سعودی حکام اور واشنگٹن میں قائم سعودی سفارت خانے کے حکام نے اس طرح کی خبروں پر تبصرہ کرنے سے گریز کیا ہے۔سعودی عرب کی جانب سے جوہری ہتھیاروں کی تیاری کی وجہ سے سعودی عرب اور امریکا کے تعلقات کشیدہ ہونے کا خدشہ ہے جبکہ یمن میں جاری جنگ اور صحافی جمال خاشقجی کے استنبول میں قتل ہونے کی وجہ سے سعودی عرب اور امریکا کے تعلقات پہلے ہی تناؤ کا شکار ہیں۔

میزائل سازی کے ماہر جیفری لوئس نے کہا کہ میزائل کی تیاری میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کو جوہری ہتھیاروں کی تیاری میں دلچسپی کے ساتھ جوڑا جاسکتا ہے۔انہوں نے سیٹلائیٹ تصاویر کا جائزہ لینے کے بعد کہا کہ میں تھوڑا پریشان ہوں کہ ہم سعودی عرب کے عزائم کا صحیح طور پر اندازہ نہیں لگا پارہے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

ایران و چین معاہدے پر امریکہ چراغ پا

امریکی صدر نے ایران اور چین کے 25 سالہ معاہدے پر سخت تشویش کا اظہار …