بدھ , 21 اپریل 2021

فلسطینی قصبے پر یہودیوں کا حملہ کھلی دہشت گردی ہے: عرب لیگ

مقبوضہ بیت المقدس (مانیٹرنگ ڈیسک)عرب لیگ نے فلسطین کے مقبوضہ مغربی کنارے کے وسطی شہر رام اللہ میں‌ المغیر کے مقام پر یہودی شرپسندوں کے حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے غاصب صہیونیوں کی نہتے فلسطینیوں کے خلاف کھلم کھلا دہشت گردی قرار دیا ہے۔

عرب لیگ کے سیکرٹری جنرل کے معاون برائے فلسطینی امور کی سعید ابو علی کی طرف سے جاری کردی ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ المغیر قصبے میں نہتے فلسطینیوں کا خون بہانے کا واقعہ مجرمانہ کارروائی اور کھلی دہشت گردی ہے جس پر آنکھیں بند کرنے اور خاموش رہنے کا کوئی جواز نہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ عالمی برادری کو فلسطینی قصبے میں‌یہودی آباد کاروں کے حملوں کا سختی سے نوٹس لینا چاہیے۔

خیال رہے کہ ہفتے کے روز مسلح یہودی بلوائیوں نے اسرائیلی فوج کی موجودگی میں رام اللہ میں المغیر کے مقام پر فلسطینیوں کے گھروں پر حملہ کر دیا تھا جس کے نتیجے میں ایک شہری شہید اور دو درجن زخمی ہوگئے تھے۔سعید ابو علی کا کہنا ہے کہ فلسطینیوں کے خلاف یہودی آباد کاروں کا حملہ اس بات کا ثبوت ہے کہ صہیونی ریاست پر تشدد حربوں پر قائم ہے۔

عرب لیگ کے عہدیدار کا کہنا تھا کہ اسرائیلی ریاست کی اشتعال انگیزی، عالمی برادری کی مجرمانہ خاموشی اور امریکا کی صہیونی ریاست کے جرائم کی حوصلہ افزائی نہتے فلسطینیوں کے خلاف صہیونی جرائم میں اضافے کا موجب ہے۔

انہوں نے کہا کہ المغیر میں‌ جو کچھ ہوا وہ بے گناہ فلسطینیوں کے خلاف صہیونیوں کی کھلی دہشت گردی ہے۔ یہودی شرپسندوں نے فوج کی موجودگی میں فلسطینیوں کے گھروں میں گھس کر نسل براہ راست فائرنگ کی جس کے نتیجے میں ایک فلسطینی شہید اور کئی زخمی ہوئے۔

ابو علی نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ فلسطینیوں یہودی آباد کاروں کے حملوں میں تحفظ فراہم کرنے کے لیے اپنی ذمہ داریاں پوری کرے اور صہیونی ریاست پر فلسطینیوں کے حقوق کےحوالے سے اقوام متحدہ کی قراردادوں پرعمل درآمد کے لیے دبائو ڈالا جائے۔

یہ بھی دیکھیں

عید نوروز کی مناسبت سے رہبر انقلاب اسلامی آیت اللہ سید علی خامنہ ای کا پیغام

رہبرانقلاب اسلامی نے فرمایا کہ گذرا ہوا سال ایران پر امریکا کے شدید ترین دباؤ …