جمعرات , 20 جون 2019

کیوں پاکستان کو او آئی سی اجلاس کا بائیکاٹ نہیں کرنا چاہیے تھا؟

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) سفارت کاری ایک فن ہے جس کے ذریعے کوئی بھی ملک عالمی سطح پر اپنے ملکی مفادات کا تحفظ کرتاہے، سفارت کاری کے ذریعے ہی دوست ممالک سے تعلقات مضبوط بنائے جاتے ہیں اور دشمن ممالک کی چالوں کو ناکام بنانے کیلیے پالیسی بنائی جاتی ہے۔

دنیا کے کسی ملک کو سفارت کاری کی اس طرح ضرورت نہیں ہے جیسے پاکستان کوبھارت جیسے جارح پڑوسی ملک کا سامناکرتے ہوئے ضرورت ہے۔ او آئی سی کے رکن57ممالک کے وزرائے خارجہ کا ابوظبی میں 2روزہ اجتماع شروع ہواہے جس میں بھارتی وزیرخارجہ سشماسوراج کو مہمان خصوصی کے طورپر مدعو کیاگیاہے۔

سشما سوراج کو مدعو کرنے کی وجہ سے پاکستان نے بھارت کو دعوت نامہ منسوخ کرنے کا مطالبہ کیااور موجودہ پاک بھارت کشیدگی کے تناظر میں وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کاکہناہے کہ پاکستان او آئی سی کے اجتماع میں شرکت نہیں کرے گا۔ سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ سلمان اور عرب امارات کے سربراہ نے پاکستان سے وزرائے خارجہ کے اجتماع میں شرکت کی درخواست کی ہے۔

وزیر اعظم عمران خان کی حکومت نے حالیہ کشیدہ صورتحال میں بھارت کو ’’جیسے کو تیسا‘‘ جواب دے کر دنیا بھر سے پذیرائی حاصل کی ہے ، اسی بحرانی صورتحال کے دوران جمعے سے ابوظبی میں اوآئی سی وزرائے خارجہ کا اجلاس شروع ہوا۔

پاکستان کے مطالبے کے باوجود یواے ای کی حکومت نے بھارتی وزیر خارجہ کو مدعو کرنے کا فیصلہ منسوخ کرنے سے معذرت کرلی اور یہ موقف اختیار کیا کہ دعوت نامہ کافی پہلے دیا گیا تھا جسے اب واپس لینا ممکن نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

سی ٹی ڈی کی ملتان میں کارروائی، امریکی شہری کےاغوا میں ملوث 2 دہشت گرد ہلاک

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) پولیس کے محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) نے ملتان میں کارروائی …