جمعرات , 19 ستمبر 2019

دوران حراست کسی بھی قسم کے تشدد کا نشانہ نہیں بنایا گیا، ابھی نندن

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان کی جانب سے جذبہ خیرسگالی کے تحت بھارت کے حوالے کیے گئے انڈین پائلٹ ابھی نندن کا کہنا ہے کہ حراست کے دوران پاک فوج کی جانب سے اسے کسی بھی قسم کے تشدد کا نشانہ نہیں بنایا گیا۔بھارتی ایئر فورس کے ونگ کمانڈر ابھی نندن ورتھامن کو جمعے کے روز واہگہ بارڈر پر بھارتی حکام کے حوالے کیا گیا جس کے بعد اسے اسپتال منتقل کیا گیا۔

بھارتی پائلٹ سے ملاقات کے لیے بھارتی فورسز اور علاوہ سیاسی رہنماؤں نے ملاقاتیں کیں، بھارتی وزیر دفاع نرمالہ ستھرامن نے بھی ابھی نندن سے ملاقات کی اور ان کی خیریت سمیت پاکستان میں گزرے وقت کے حوالے سے دریافت کیا۔بھارتی پائلٹ نے تسلیم کیا کہ وہ تقریباً 60 گھنٹے تک زیر حراست رہا لیکن اس دوران پاک فوج کی جانب سے اس پر کسی بھی قسم کا جسمانی تشدد نہیں کیا گیا۔

یاد رہے کہ ونگ کمانڈر ابھی نندن بھارتی طیارے مگ 21 بیسن کا پائلٹ تھا جسے پاک فضائیہ نے 27 فروری کی صبح کی گئی کارروائی کے دوران گرایا تھا اس دوران بھارتی پائلٹ پیراشوٹ کی مدد سے آزاد کشمیر کے علاقے میں اترا جسے شہریوں نے پکڑ پر تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد پاک فوج کے حوالے کردیا تھا۔وزیراعظم عمران خان نے اگلے ہی روز پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس کے دوران جذبہ خیر سگالی کے تحت بھارتی پائلٹ کی رہائی کا اعلان کیا جسے دنیا بھر میں سراہا گیا۔

یہ بھی دیکھیں

ارکان یورپی پارلیمنٹ کے کشمیر کی صورتحال پر بحث کیلئے 4 مطالبات پیش

اسٹراسبرگ(مانیٹرنگ ڈیسک) یورپی پارلیمنٹ میں مسئلہِ کشمیر بارہ سال زیرِ بحث آیا جس میں کشمیر …