جمعرات , 18 اپریل 2019

حکومت کو پاکستانیوں کے آف شور اکاؤنٹس میں 11 ارب ڈالر کی موجودگی کا یقین

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت کو یقین ہے کہ پاکستانی شہریوں کے بیرونِ ملک ایک لاکھ 52 ہزار 5 سو سے زائد بینک اکاؤنٹس میں 11 ارب ڈالر کی خطیر رقم موجود ہے جس میں سے آدھی رقم انہوں نے کبھی ظاہر نہیں کی۔ وزیر مملکت برائے ریونیو حماد اظہر نے لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری (ایل سی سی آئی) میں کاروباری افراد سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک سے باہر (آف شور) اکاؤنٹس کی تعدد بہت زیادہ ہے۔

ان کے مطابق تمام آف شور اکاؤنٹس پاکستان میں رہائش پذیر شہریوں کے ہیں جس میں موجود نصف سے زائد رقوم ظاہر نہیں کی گئیں اور زیادہ تر کے کاروبار قانونی لحاظ سے درست یا درج بھی نہیں۔ان کا کہنا تھا یہ اکاؤنٹس ملک میں ہونے والی ٹیکس چوری کا اندازہ لگانے کے لیے کافی ہیں اور اگر ہم یہ رقم واپس ملک میں لانے میں کامیاب ہوجائیں تو ہمیں کسی سے قرض مانگنے کی ضرورت نہ پڑے۔وزیر مملکت نے بتایا کہ ان آف شور اکاؤنٹس کی نگرانی فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کی ذریعے کی جارہی ہے۔

حماد اظہر نے بتایا کہ حکومت نے نیشنل ڈیٹا بیس رجسٹریشن اتھارٹی(نادرا) وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے)، اسٹیٹ بینک پاکستان، اور ایف بی آر کی مدد سے پاکستان کے ممکنہ ٹیکس دہندگان کا پروفائل تیار کرنے کے لیے ٹیکنالوجی تیار کرلی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ٹیکس چوروں کی پروفائلز مرتب کرنے کے لیے تقریباً نصف کام ہوچکا ہے جو اپریل کے آخر تک مکمل ہوجائے گا۔

واضح رہے کہ ایف بی آر چیئرمین جہانزیب خان نے پارلیمانی کمیٹی کے گزشتہ ہفتے ہونے والے اجلاس میں بتایاتھا کہ نہ تو ادارے ان آف شور اکاؤنٹس سے ٹیکس وصولی کا کوئی ہدف مقرر کیا نہ ہی پانامہ لیکس کے بعد ٹیکس میں اضافہ دیکھا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ آف شور اکاؤنٹس کی موصول شدہ معلومات پر ٹیکس کے اہداف مقرر کرنا ممکن نہیں کیوں کہ ممکن نے اکاؤنٹس ہولڈرز نے یہ رقم قانونی طریقے سے منتقل کی ہو یا ان کے پاس اس کا جواز موجود ہو۔

خیال رہے کہ تقریباً 400 اکاؤنٹس ہولڈرز کے اکاؤنٹس میں 10 لاکھ ڈالر یا اس سے زائد رقم ہونے کا امکان ہے جس میں او ای سی ڈی کی جانب سے معلومات شیئر کرنے ک بنیاد پر ایف بی آر صرف ایک فرد سے 12 لاکھ ڈالر ٹیکس وصولی کی ہے۔

یاد رہے کہ کئی سال قبل سابق وزیر خزانہ اسحٰق ڈار نے دعویٰ کیا تھا کہ پاکستانی شہریوں نے 2 کھرب ڈالر کی رقم سوئس اکاؤنٹس میں رکھی ہوئی ہے تاہم اپنے دعوے کی تصدیق کے لیے انہوں نے کبھی اس معلومات کے ذریعے کے بارے میں نہیں بتایا۔انہی کے دعوے کی بنیاد پر پاکستان تحریک انصاف نے عوام سے اقتدار میں آکر یہ رقم واپس ملک میں لانے کا وعدہ کیا تھا جس کے لیے وزیر اعظم عمران خان نے ریکوری یونٹ بھی قائم کیا ۔

یہ بھی دیکھیں

بلوچستان میں یقیناً بیرونی قوتیں ملوث ہیں: شاہ محمود قریشی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اورماڑہ کوسٹل ہائی وے پر فائرنگ ...