بدھ , 12 مئی 2021

آصف زرداری اوربلاول نیب میں پیش، تفتیش جاری

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اپنے والد کی زیر ملکیت کمپنی کی جانب سے مبینہ طور پر لیے گئے قرض کی تحقیقات کے سلسلے میں آج پہلی مرتبہ قومی احتساب بیورو(نیب) میں پیش ہو گئے ہیں جبکہ آصف علی زرداری بھی ان کے ہمراہ ہیں۔اسلام آباد میں نیب ہیڈکوارٹرز میں بلاول کی پیشی کے موقع پر چیئرمین پیپلزپارٹی سے اظہار یکجہتی کے لیے جیالوں کی بڑی تعداد نیب آفس کے باہر پہنچ چکی ہے۔

اس موقع پر جیالوں اور پولیس کے درمیان ہاتھا پائی ہوئی اور مبینہ طور پر جیالوں کے پتھراؤ سے پولیس اہلکار زخمی ہوگیا جس کے بعد پولیس نے پیپلزپارٹی کے متعدد کارکنوں کو حراست میں لے لیا۔

چیئرمین پیپلزپارٹی اپنے والد آصف زرداری کے ہمراہ نیب آفس پہنچے تو وہاں موجود پیپلزپارٹی کے کارکنوں کی بڑی تعداد نے ان کا استقبال کیا، اس موقع پر جیالے زبردست نعرے بازی بھی کرتے رہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق بلاول بھٹو زرداری اور ان کے والد سے تفتیش کے لیے 16 رکنی ٹیم تشکیل دی گئی ہے اور دونوں سے علیحدہ ٹیمیں نیب کی عمارت میں الگ الگ تفتیش کر رہی ہیں۔

ذرائع کے مطابق ڈی جی نیب راولپنڈی عرفان منگی دونوں ٹیموں کی قیادت کر رہے ہیں جبکہ بلاول بھٹو اور آصف زرداری دونوں کو سوالنامہ دے دیا گیا ہے۔ادھر پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر قمر زمان کائرہ نے دعویٰ کیا ہے کہ پولیس نے پیپلز پارٹی کے 200 سے زائد جیالے گرفتار کر لیے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پر امن احتجاج کرنے والے 200 سے زائد جیالوں کو گرفتار کرنے کے ساتھ ساتھ 50 سے زائد کارکنوں کو لاپتہ کردیا گیا ہے۔قمر زمان کائرہ نے کہا کہ تشدد، پتھراؤ اور لاٹھی چارج سے ہمیں روکا نہیں جاسکتا اور انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ وہ گرفتار کارکنوں کو فوری رہا کرے۔

دوسری جانب پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما خورشید شاہ نے بلاول اور آصف علی زرداری کی نیب میں طلبی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ آئین اور قانون سب کے لیے ہونا چاہیے لیکن حکومت میں بیٹھے لوگوں کے خلاف کارروائی نہیں کی جارہی۔انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں جہاں کا کیس ہو وہیں چلنا چاہیے لیکن ایسا محسوس ہوتا ہے کہ سندھ اور اس کی عدالتوں پر اعتماد نہیں کیا جارہا۔

اس موقع پر انہوں نے نیب دفتر کے باہر پولیس کی جانب سے پیپلز پارٹی کارکنوں کی حراست کی بھی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ نیب کی آڑ میں انتشار اور گرفتاریوں کی کوشش کی جارہی ہے۔

گزشتہ دنوں پاکستان پیپلز پارٹی کے ترجمان سینیٹر مصطفیٰ نواز کھوکھر نے تصدیق کی تھی کہ 15مارچ کو نوٹس موصول ہونے کے بعد بلاول نے نیب کے سامنے پیش ہونے کا فیصلہ کیا ہے اور سابق چیئرمین سینیٹ اور وزیر قانون فاروق ایچ نائیک مقدمے میں پیپلز پارٹی چیئرمین کی نمائندگی کریں گے، آصف علی زرداری بھی نیب میں پیش ہوں گے۔

اس سے قبل اسلام آباد میں ایک کمپنی پارک لین اسٹیٹس پرائیویٹ لمیٹیڈ کی جانب سے مبینہ طور پر زمین کی خریداری کی تحقیقات کے سلسلے میں نیب نے گزشتہ سال 13دسمبر کو آصف علی زرداری اور بلاول دونوں کو راولپنڈی میں طلب کیا تھا البتہ صرف آصف علی زرداری عدالت میں پیش ہوئے تھے اور بلاول کی نمائندگی ان کے وکیل نے کی تھی۔

مصطفیٰ نواز کھوکھر نے کہا کہ بلاول بھٹو زرداری کو پارک لین فرم کی جانب سے مبینہ طور پر لیے گئے قرض کی تحقیقات کے سلسلے میں نیب نے طلب کیا تھا اور دعویٰ کیا کہ بلاول اس کمپنی کے معمولی شیئر ہولڈر اسی وقت بن گئے تھے جب ان کی عمر صرف ایک سال تھی۔

انہوں نے بتایا کہ یہ کمپنی آصف علی زرداری نے 31جولائی 1989 میں خریدی تھی اور جب 2008 میں انہوں نے صدر پاکستان کا عہدہ سنبھالا تو وہ کمپنی کی ڈائریکٹر شپ سے مستعفی ہوگئے تھے، بلاول بھٹو زرداری نے کبھی بھی ڈائریکٹر کی حیثیت سے خدمات انجام نہیں دیں اور شیئر ہولڈر کی حیثیت سے ان کا کمپنی کے روزمرہ کے معمولات سے کوئی لینا دینا نہیں۔

مصطفیٰ نواز کھوکھر نے کہا کہ اس معاملے میں کوئی بھی عوامی پیسہ شامل نہیں اور یہ ایک نجی قرض تھا جو ایک پوائیویٹ بینک نے نجی کمپنی کو دیا، انہوں نے دعویٰ کیا کہ قرض کبھی بھی ڈیفالٹ نہیں ہوا اور اسے parthenon نامی کمپنی کی جانب سے لیا گیا تھا جو پارک لین لمیٹڈ کی شراکت دار ہے، جس کمپنی کی جانب سے قرض لیا گیا تھا اس میں زرداری اور ان کے بیٹے کا کوئی کردار نہیں۔

ترجمان نے دعویٰ کیا کہ جس خاص ٹرانزیکشن کے بارے میں پیپلز پارٹی چیئرمین سے سوالات کیے جا رہے ہیں وہ ایک ایسے وقت میں کی گئی تھیں جب بلاول پاکستان میں بھی نہیں تھے اور بیرون ملک تعلیم حاصل کر رہے تھے۔

اس سے قبل منگل کو اسلام آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے مرکزی سیکریٹری جنرل نیئر بخاری اور سیکریٹری جنرل پنجاب چوہدری منظور احمد نے نیب کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ حال ہی میں بریگیڈیئر ریٹائرڈ اسد منیر بیگ نے مبینہ طور پر نیب کے ہاتھوں تذلیل کے سبب خودکشی کی جس سے نیب کے کام کے طریقہ کار پر کئی سوالات اٹھ رہے ہیں۔

انہوں نے سابق صدر آصف علی زرداری اور ان کی بہن فریال تالپور کے خلاف جعلی بینک اکاؤنٹس کیس کی کراچی سے راولپنڈی منتقلی پر تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ قانون کہتا ہے کہ ٹرائل اسی جگہ ہونا چاہیے جہاں جرم سرزد ہوا ہو۔

ان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کی قیادت نے فیصلہ کیا ہے کہ بلاول بھٹو زرداری، آصف علی زرداری اور فریال تالپور نیب اور عدالت میں پیش ہوں گے تاکہ اپنا دفاع کرتے ہوئے زبانی اور تحریری طور پر سوالات کا جواب دے سکیں اور کہا کہ زرداری اور فریال کے خلاف مقدمے بینکنگ کورٹس میں ہونے چاہئیں۔

یہ بھی دیکھیں

پاکستان جنوبی ایشیا میں امن و استحکام کا خواہاں، عارف علوی

پاکستان کے صدر عارف علوی نے علاقائی تنازعات کے پرامن حل کی ضرورت پر زور …