جمعرات , 13 مئی 2021

مشترکہ ایٹمی معاملے پر تمام فریقین کو عمل کرنا چاہئیے،چین

بیجنگ (مانیٹرنگ ڈیسک)چین کی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں مشترکہ ایٹمی معاہدے میں شریک تمام فریقوں پر زوردیا ہے کہ وہ گروپ 1+5 اور ایران کے درمیان ہونے والے مشترکہ ایٹمی معاہدے پر عمل کریں۔ چين کی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ایران کے ساتھ ہونے والے مشترکہ ایٹمی معاہدے پر تمام فریقوں کو عمل کرنا چاہیے ۔

ادھر ایران کے صدر حسن روحانی نے مشترکہ ایٹمی معاہدے کی بعض شقوں پر عمل در آمد روک دیا ہے۔ صدر حسن روحانی نے کہا کہ امریکہ غیر قانونی طریقہ سے مشترکہ ایٹمی معاہدے سے خارج ہوگیا امریکہ کے خروج کو ایک سال ہوگیا ہے اور اس مدت میں ایران نے نہایت ہی صبر و تحمل سے کام لیا اور مشترکہ ایٹمی معاہدے پر عمل کا سلسلہ جاری رکھا ۔ اب امریکہ نے ایران کے خلاف یکطرفہ اقتصادی پابندیوں کو دوبارہ آغازکردیا ہے جومشترکہ ایٹمی معاہدے اور بین الاقوامی قوانین کی روح کے بالکل خلاف اور منافی ہیں اور امریکہ کی اس منہ زوری اور غیر قانونی اقدام کے خلاف سکیورٹی کونسل اور مشترکہ ایٹمی معاہدے میں باقی رہنے والے ارکان نے کوئی ٹھوس قدم نہیں اٹھایا ۔ لہذا ایران نے مشترکہ ایٹمی معاہدے میں تعریف شدہ اصولوں کے مطابق معاہدے کی بعض شقوں سے خارج ہونے کا فیصلہ کیا ہے جن میں یورینیم افزودگی اور آب سنگین کو محدود کرنے والی شقیں بھی شامل ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

میانمار مظاہرین کے جلوس جنازہ پر فوج کی فائرنگ

میانمار میں فوجی بغاوت کے خلاف مظاہروں اور مظاہرین پر فوج کی فائرنگ کا سلسلہ …