ہفتہ , 8 مئی 2021

سعودی عرب میں ’مثالی اقامے‘کی منظوری،غیرملکی اب خود کاروبارکرسکیں گے

الریاض(مانیٹرنگ ڈیسک) سعودی عرب کی مجلس شوریٰ نے غیر معمولی خصوصیات کے حامل ‘مثالی اقامہ پروگرام’ منصوبے کی منظوری دے دی ہے۔ مثالی اقامہ پروگرام سعودی عرب میں مقیم غیر ملکی شہریوں کے لیے مملکت کی طرف سے ایک نئی سہولت ہوگی۔عرب ٹی وی کے مطابق مثالی اقامہ پروگرام دائمی اور عارضی دو اقسام پر مشتمل ہوگا۔ عارضی اقامہ پروگرام محدود اور مخصوص فیس کے ذریعے حاصل کیا جاسکے گا۔ اقامہ ہولڈر کو سعودی عرب میں بعض اضافی مراعات حاصل ہوں گی۔

اسے محدود پیمانے پر سعودی عرب میں کاروباری سرگرمیوں میں حصہ لے سکے گا۔اس کے علاوہ مثالی اقامہ پروگرام رکھنے والے غیر ملکی کو اپنے خاندان کو ساتھ رکھنے، اقارب کو ملاقات کے لیے بلانے، لیبر منگوانے، جائیداد بنانے، نقل وحمل کے وسائل کی ملکیت حاصل کرنے کی اجازت ہوگی۔ اس کے بدلے میں اسے طے شدہ ضوابط کے مطابق فیس اداکرنا ہو گی۔

مثالی اقامہ ہولڈر کو سعودی عرب میں آمدو رفت کی اجازت ہوگی۔ دائمی اقامہ غیر معینہ مدت کے لیے ہو گا یا قابل تجدید ہوگا۔حکومت نے مملکت میں مثالی اقامہ کے امور کے لیے ایک ادارہ قائم کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے جو صرف اقامہ کے امور کی نگرانی کرے گا۔

مثالی اقامہ کے حصول کے لیے امیدوار کے لیے وضع کردہ شرائط میں درست پاسپورٹ کا ہونا، مالی طور پر مستحکم ہونا، عمر کی کم سے کم حد 21 سال، سعودی حکومت کی طرف سے ریگولر اقامہ حاصل کیا ہو، سابقہ ریکارڈ میں کسی قسم کے جرم میں ملوث نہ ہو اور متعدی امراض سے محفوظ ہونے کا تصدیق شدہ سرٹیفکیٹ بھی رکھتا ہو۔مجلس شوریٰ میں مثالی اقامہ نظام کی رائے شماری کے لیے اس کی حمایت میں 76 اور مخالفت میں 55 ووٹ ڈالے گئے۔

یہ بھی دیکھیں

عید نوروز کی مناسبت سے رہبر انقلاب اسلامی آیت اللہ سید علی خامنہ ای کا پیغام

رہبرانقلاب اسلامی نے فرمایا کہ گذرا ہوا سال ایران پر امریکا کے شدید ترین دباؤ …