منگل , 25 جون 2019

ایٹمی معاہدے کو بچانے کے لیے یورپ میں ہلچل

لندن (مانیٹرنگ ڈیسک)ایٹمی معاہدے کے مستقبل کے حوالے سے شدید تشویش میں مبتلا یورپی یونین کے وزرائے خارجہ پیر کے روز برسلز میں جمع ہوئے تاکہ اس معاہدے میں ایران کے باقی رکھنے کے لئے ممکنہ اقدامات اور طریقہ کار کا جائزہ لے سکیں۔ذرائع کے مطابق امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو بھی اپنے دورہ روس کا پروگرام تبدیل کرتے ہوئے برسلز میں ہونے والے یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کے اجلاس میں پہنچے لیکن انہیں فیڈریکا موگرینی کی جانب سے سرد مہری کا سامنا کرنا پڑا۔

یورپی یونین کے امور خارجہ کی سربراہ فیڈریکا موگرینی نے امریکی وزیر خارجہ کی برسلز آمد پر زیادہ گرمجوشی کا مظاہرہ نہیں اور کہا کہ اجلاس کے شیڈول کو مد نظر رکھتے ہوئے ہمیں غور کر نا ہو گا کہ امریکی وزیر خارجہ کے ساتھ ملاقات کا وقت نکل سکتا ہے یا نہیں۔یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کے اجلاس سے قبل صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے فیڈریکا موگرینی نے یہ بات زور دے کر کہی کہ یورپ ایران کے ساتھ ہونے والے ایٹمی معاہدے کی بدستور حمایت کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ جامع ایٹمی معاہدہ علاقائی سلامتی کا ایک ستون اور عالمی و علاقائی سطح پر ایٹمی ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ میں کلیدی اہمیت کا حامل ہے، لہذا ہم اس کی حمایت جاری رکھیں گے۔دوسری جانب جرمن وزیر خارجہ ہیکو ماس نے یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تمام یورپی ممالک اس بات پر متفق ہیں کہ ایران کے ساتھ ایٹمی معاہدے کو باقی رکھنا اور اس عملدرآمد ضروری ہے۔

انہوں نے کہا کہ پچھلے ایک برس کے دوران کافی تعمیری اقدامات انجام پائے ہیں اور خاص طور سے خصوصی مالیاتی نظام انسٹیکس کے حوالے سے کافی پیشرفت ہوئی تاکہ یہ نظام عملی شکل اختیار کرے اور ایٹمی معاہدے پر عملدرآمد کیا جاتا رہے۔حکومت جرمنی کے ترجمان اسٹفن زیبرٹ نے بھی اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ ان کا ملک اپنے یورپی شرکا کے ہمراہ ایران کے ساتھ قانونی تجارت اور مالیاتی دین کو یقینی بنانے کے لیے لازمی اقدامات کا پابند ہے۔

فرانس کے وزیر خارجہ جان ایوے لیے دریان نے ایران کی جانب سے ساٹھ روز کی مہلت پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ایران کے خلاف امریکی پابندیاں یورپ کے مفاد میں نہیں جبکہ ایٹمی معاہدے کے حوالے سے ایران کی جانب سے دیا جانے والا الٹی میٹم بھی ہمارے لیے مناسب نہیں ہے۔فرانسیسی وزیر خارجہ نے ایک بار پھر یہ بات زور دے کر کہی کہ یورپ بدستور اس بات کا خواہاں ہے کہ ایران کو ایٹمی معاہدے میں باقی رکھا جائے۔

درایں اثنا ہالینڈ کے وزیر خارجہ اسٹف بلاک نے برسلز میں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ایران کا ایٹمی معاہدے میں باقی رہنا انتہائی اہمیت کا حامل ہے اور ہم نے اس حوالے سے مذاکرت کا آغاز کر دیا ہے۔آسٹریا کی وزیر خارجہ کیرن کنائسل نے بھی برسلز میں یورپی یونین کی خارجہ تعلقات کونسل کے اجلاس سے پہلے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے جامع ایٹمی معاہدے کو باقی رکھے جانے کی ضرورت پر زور دیا۔

قابل ذکر ہے کہ ایٹمی معاہدے پر عملدرآمد کے حوالے سے ایران کی جانب سے دیئے جانے والے ساٹھ روز کے الٹی میٹم کے بعد یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کا یہ پہلا اجلاس ہے۔

یہ بھی دیکھیں

سونا، غیر ملکی کرنسی کی برآمدگی کیلئے ایف بی آر کو گھروں پر چھاپے مارنے کا اختیار

اسلام آباد: مالی سال 20-2019 کے فنانس بل کی منظوری کے بعد فیڈرل بورڈ آف …