بدھ , 26 جون 2019

خونی جڑیں رکھنے والی صہیونی تنظیم

دلچسپ بات یہ ہے کہ جب موساد کے سابق آفیسر اور کتاب ’’فریب کے راستے سے‘‘ کے مولف ’’ویکٹور اوسٹروفسکی‘‘ سے موساد کے ہاتھوں لوگوں کے قتل کے بارے میں سوال کیا گیا تو انہوں نے نامہ نگاروں کو اس سوال کا جواب دیے بغیر اپنے استعفیٰ کی وجہ موساد کا بہیمانہ اور وحشیانہ جرائم کا مرتکب ہونا بیان کیا۔

شائد آپ نے موساد(۱) نامی تنظیم کا نام سنا ہو گا۔ موساد وہی اسرائیل کی خفیہ ایجنسی ہے جس کی سرگرمیوں کا بنیادی دائرہ، بین الاقوامی سطح پر جاسوسی کرنا ہے۔ دوسری عالمی جنگ کے بعد دسیوں ہزار جاسوس اپنے اپنے گھروں میں واپس پلٹ گئے لیکن ان جاسوسوں کی ایک عظیم تعداد اپنے ملکوں میں واپس جانے کے بجائے اپنی خیالی سرزمین ’موعود‘ کی طرف چلے گئے، اور اسرائیل کے پہلے وزیر اعظم بن گورین کے حکم سے ان جاسوسوں کے ذریعے بنائی گئی ’ہاگانا‘(۲) نامی فوجی گروہ میں سے موساد کو جنم دیا گیا۔

ہاگانا نے یہود ایجنسی کے حکم کے ماتحت کئی دیگر فوجی مانند گروہوں جیسے بیتار(۳)، ایرگن (۴)، لحی (۵) وغیرہ کو تشکیل دیا کہ جس کے نتائج ’اللد‘ اور ’الرملہ‘ دیہاتوں میں ’دیریاسین‘ جرائم کا ارتکاب، حیفا میں بم دھماکے اور ’ملک داوود ہٹل‘ کی مسماری جیسے جرائم کی شکل میں سامنے آئے۔(۶) ان گروہوں کے جرائم اس قدر زیادہ تھے کہ ۱۹۴۸ میں اسرائیلی فوجی جب شہر یافا میں داخل ہوئے تو عرب فلسطینی ان کے خوف سے اپنا سب کچھ چھوڑ کر بھاگ نکلے (۷) اور اس شہر پر صہیونیوں نے باآسانی قبضہ کر لیا۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ جب موساد کے سابق افیسر اور کتاب ’’فریب کے راستے سے‘‘(۸) کے مولف ’’ویکٹور اوسٹروفسکی‘‘ سے موساد کے ہاتھوں لوگوں کے قتل کے بارے میں سوال کیا گیا تو انہوں نے نامہ نگاروں کو اس سوال کا جواب دئے بغیر اپنے استعفیٰ کی وجہ موساد کا بہیمانہ اور وحشیانہ جرائم کا مرتکب ہونا بیان کیا۔

تاحال موساد نے اسرائیل کی خیالی سکیورٹی فراہم کرنے کی غرض سے بہت ساری اہم شخصیات جیسے محمود المبوح (۹)، شیخ احمد یاسین (۱۰)، عبد العزیز رنتیسی (۱۱) جرمنی کے هاینتز کروگ (۱۳) ہوبرٹز کوکرز (۱۴)، محمود ہمشاری (۱۵) ڈاکٹر یحیی المشاد (۱۶)، عماد مغنیہ(۱۷)، اور فتحی شقاقی (۱۸) کے قتل میں ہاتھ رنگین کئے ہیں۔بشکریہ ابنا نیوز

حواشی
1 Mossad
2 Haganah
3 Bitar
4 irgun
5 lehi
6 میخائیل بالمبو، کیف طرد الفلسطینیون من دیارهم، ۱۹۹۰
7 the iron wall: Zionist revisionism form Jabotinsky to Shamir, 1984، Brenner, Lenni
8 by way of deception
9 Mahmoud Al Mabhouh
10 Ahmed Yasin
11 Abdel Aziz al‑Rantisi
12 Said Seyam
13 Heinz Krug
14 Herberts Cukurs
15 Mahmoud Hamshari
16 Yehia El-Mashad
17 Imad Fayez Mughniyeh
18 Fathi Shkak

یہ بھی دیکھیں

امریکا کی ساری دھمکیاں بے کار، منہ کی کھانے کے بعد سرجیکل اسٹرائیک کے دعوے کی حقیقت …

سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی آئی آر جی سی نے ملک کے جنوبی صوبے ہرمزگان کے …