جمعرات , 19 ستمبر 2019

پرائیویٹ اسکولز کی فيس ميں سالانہ صرف 5 فيصد اضافہ ہوسکتا ہے،سپریم کورٹ

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)پرائیوٹ اسکولز فیس کیس میں سپریم کورٹ نے فیصلہ سنادیا، نجی اسکولوں کی فیس میں سالانہ صرف 5 فیصد ہی اضافہ ہوگا اور اِس سے زیادہ نہیں ہوسکے گا۔ اس کیس میں لاہور ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دیتے ہوئے سندھ ہائیکورٹ کا حکم نامہ برقرار رکھا گیا ہے۔پرائیویٹ اسکول فیس کیس میں سپریم کورٹ نے فیسوں میں اضافے سے متعلق کیس کا محفوظ فیصلہ سنادیا۔جسٹس اعجاز الاحسن نے نجی اسکولز مالکان کی درخواست پر محفوظ فیصلہ پڑھ کر سنایا۔ فیسوں میں سالانہ 15 سے 20 فیصد اضافہ کرنے کی استدعا مسترد کردی گئی ہے۔

عدالت نے قرار دیا کہ فیس میں سالانہ 5 فیصد ہی اضافہ ہوگا، پانچ فیصد سے اوپر اور 8 فیصد تک اضافے کا جواز پیش کرنا ہوگا۔عدالت نے واضح کیا کہ نجی اسکولز قانون کے مطابق ہی فیس وصول کر سکتے ہیں۔سپریم کورٹ نے نجی اسکولوں کے حق میں آنے والا لاہور ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دے دیا اور سندھ ہائیکورٹ کا فیصلہ برقرار رکھا۔ سندھ ہائیکورٹ نے فیسوں میں سالانہ 5 فیصد سے زیادہ اضافے کو غیر قانونی قراردیا تھا۔

عدالت عظمٰی نے فیسوں میں 20 فیصد کمی سمیت تمام عبوری حکم بھی واپس لے لیے ہیں۔ اس کے علاوہ نجی اسکولوں کو فیس کمی کے حکم سے لے کر آج تک کم کی گئی فیس بطور بقایاجات وصول کرنے سے بھی روک دیا گیا ہے۔سپریم کورٹ کے جسٹس فیصل عرب نے فیس میں 5 فیصد اضافے کی حد سے اختلاف کیا ہے۔ کیس کا تفصیلی فیصلہ بعد میں جاری کیا جائے گا۔

یہ بھی دیکھیں

کیا پنجاب میں آپ کی ٹیم میں بہتر، تجربہ کار بندہ نہیں؟شاہد آفریدی کا وزیراعظم سے سوال

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان شاہد آفریدی نے پنجاب کے شہر قصور …