پیر , 19 اگست 2019
تازہ ترین

بجٹ عوامی امنگوں کی ترجمانی کرتا ہے، فردوس عاشق اعوان

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ بجٹ عوامی امنگوں کی ترجمانی کرتا ہے اور وزیر اعظم نے اس بجٹ میں جو ترجیحات طے کی ہیں وہ آنے والی نسل اور ملک کو آگے لے جانے کے لیے ہیں تاہم اس میں کچھ کڑوی گولیاں ضروری ہیں۔

اسلام آباد میں وفاقی وزرا کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہم چاہتے ہیں کہ ان کڑوی گولیوں کو ’شوگر کوٹڈ‘ کرکے آپ نگلیں تاکہ کڑواہٹ محسوس نہ ہو اور آرام ضرور آئے، مجھے امید ہے کہ یہ بجٹ بالاخر آپ کو وقت درد اور تکلیف سے آرام دلانے میں ایسی دوائی کا کام کرے گا جس کو نگلتے ہوئے کڑواہٹ محسوس ہوگی لیکن بعد میں ہر قسم کی تکلیف سے نجات مل جائے گی۔فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ یہ گولیاں معیشت کے ساتھ جڑی تکلیفوں کے لیے ہے، سیاست کے لیے گولیاں الگ ہیں۔

دوران گفتگو سیاسی صورتحال پر بات چیت کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ’کل ایک راج کماری نے کنیزوں کے جھرمٹ میں جس طرح کے لب و لہجے میں بات کی ان کا یہ تکبر اور غرور یہ اشارہ دے رہا ہے کہ شریف خاندان نے نشان عبرت بن کر بھی کوئی سبق نہیں سیکھا‘۔

انہوں نے کہا کہ یہ نشان عبرت ہے کہ ملک کا 3 مرتبہ وزیر اعظم رہنے والا پاناما کی کرپشن اور لوٹ مار کی کہانیوں کا شکار ہو، 22 کروڑ عوام کو یہ معلومات پاناما کے ذریعے ملے کہ ملک کا سربراہ لوٹ کھسوٹ کرپشن میں ملوث ہوکر باہر اپنے خاندان کی جائیدادیں بنانے میں مصروف رہا۔

مریم نواز کے بارے میں انہوں نے مزید کہا کہ جس انداز میں بات کرکے وہ ہمارے اعصاب کو دیکھ رہی ہیں وہ دعوت دے رہی ہیں کہ میری اوقات مجھے کیوں نہیں دکھاتے، کیوں نہیں بتاتے کہ میں سونے کا چمچہ لے کر پیدا ہوئی تھی اور راج کماری بن کر بادشاہت میں سرکاری وسائل کا بے دریغ استعمال کرتی تھی اور کوئی پوچھنے والا نہیں تھا۔

اپنی تنقید جاری رکھتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ’یہ لوگ سرکاری فنڈ سے 70 کروڑ کی چار دیواری بناتے تھے لیکن کوئی پوچھتا نہیں تھا، وزیر اعظم کا جہاز میرے چچا استعمال کرتے تھے لیکن کوئی پوچھتا نہیں تھا، میرے بھائی ہر قسم کا عیش و آرام اور کاروباری سودے کرتے تھے تو انہیں کوئی پوچھتا نہیں تھا لیکن آج یہ مکافات عمل ہے کہ آپ کے والد جیل میں ہیں‘۔

معاون خصوصی کا کہنا تھا کہ نواز شریف جائیدادیں بنا کر منی لانڈرنگ کرکے مختلف ممالک میں اپنے بچوں کو مستفید کرتے رہے لیکن آج یہ دونوں بیٹے فخر سے کہتے ہیں کہ ہم پاکستانی شہری نہیں ہیں، وہ پاکستانی شہری نہ ہونے کا اعلان کرتے ہیں۔انہوں نے مریم نواز کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ اپنی اوقات میں رہیں اور اگر اپنی زبان ٹھیک نہیں کی تو بہت کچھ کہنے کو موجود ہیں لیکن عمران خان کہتے ہیں کہ معاشرے کی سماجی، مذہبی اور ثقافتی اقدار ہیں، جنہیں ہم نے برقرار رکھنا ہے۔

فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم کی جانب سے اعلان کیے گئے کمیشن کے سربراہ کا اعلان آئندہ ہفتے کریں گے اور اس کے ضابطہ کار کو حتمی شکل دینے جارہے ہیں اور حکومت میں موجود اور باہر رہنے والے شخص کو آئین و قانون کے دائرہ کار میں رہتے ہوئے اپنے اعمال کا حساب دینا ہے۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) والے جیل میں نواز شریف سے مل کر فخر سے ایسے بتاتے ہیں جیسے جیل کوئی مقدس مقام ہے۔

اس موقع پر وفاقی وزیر صاحبزادہ محبوب سلطان نے بات کرتے ہوئے کہا کہ 1970 میں پاکستان کو سنگاپور، ملائیشیا رول ماڈل کے طور پر دیکھتے تھے اور ہماری پیروی کرتے تھے لیکن آج ہم کہاں اور وہ ممالک کہاں پہنچ گئے ہیں، جس کی وجہ ہماری سابق حکومتوں نے حکومت اور اپنی ذاتی مفاد کو ترجیح دی اور ملک کے بارے میں نہیں سوچا، تاہم اگر اتنی کرپشن کے باوجود یہ ملک چل رہا ہے تو اس کی بڑی وجہ اللہ کا کرم، پاک فوج اور اشیا خورونوش میں خود کفیل ہونا ہے۔انہوں نے کہا کہ اس ملک میں 3 اہم شعبے ہیں، جس میں پہلا زراعت ہے، دوسرا تعلیم اور تیسرا صحت کا شعبہ ہے، تاہم ان شعبوں پر توجہ نہیں دی گئی۔

وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ ملک میں زراعت کے شعبے کو بالکل نظر انداز کیا گیا، تاہم وزیر اعظم عمران خان نے اس شعبے پر توجہ دی ہے اور جو وفاقی حکومت کا شیئر ایک ارب روپے تک وہ اس مرتبہ ساڑھے 12 ارب روپے ملے ہیں جبکہ 12 سے 18 ارب کے صوبائی بجٹ 50 ارب روپے تک ہوں گے۔اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بہت افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ زرعی ملک میں 4 ارب روپے کے خوردنی تیل درآمد کرتے ہیں جبکہ دالوں میں بھی ہم خود کفیل نہیں ہیں وہ بھی درآمد کرنی پڑتی ہے۔

یہ بھی دیکھیں

حکومت کا ایک سال، معاون خصوصی اطلاعات فردوس عاشق آج کامیابیوں کی رپورٹ جاری کریں گی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) حکومت کا ایک سال، معاون خصوصی اطلاعات فردوس عاشق آج کامیابیوں کی …