ہفتہ , 24 اگست 2019

ملائیشیا: اولڈہاؤس میں معمر افراد کے ساتھ ناروا سلوک کیےجانے کا انکشاف

کوالالمپور(مانیٹرنگ ڈیسک)ملائیشیا کے حکام نے ایک اولڈ ہاؤس میں مبینہ طور پر معمر افراد کو بر وقت کھانا فراہم نہ کرنے، ان کے ساتھ ناروا سلوک کیے جانے اور انہیں پیشاب پینے پر مجبور کیے جانے کے واقعے کی تفتیش شروع کردی۔ملائیشیا کی سوشل میڈیا پر متعدد افراد نے ایک نجی اولڈ ہاؤسز میں رہائش پذیر کچھ افراد کی تصاویر شیئر کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ معمر افراد کو انتظامیہ کی جانب سے بر وقت کھانا فراہم نہیں کیا جا رہا ہے اور انہیں پیشاب پینے پر مجبور کیا جا رہا ہے۔

ملائیشیا کے نشریاتی ادارے ’دی اسٹار‘ نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ سوشل میڈیا پر اولڈ ہاؤس سے متعلق سنگین الزامات سامنے آنے کے بعد حکومت نے معاملے کی تحقیقات شروع کردی۔رپورٹ کے مطابق سوشل میڈیا پر 17 جون کو الزامات سامنے آئے اور دیکھتے ہی دیکھتے اولڈ ہاؤس میں رہائش پذیر افراد کی تصاویر وائرل ہوگئیں۔

سوشل میڈیا پر صارفین نے الزام عائد کیا کہ نجی اولڈ ہاؤس کی انتطامیہ معمر افراد کے ساتھ ناروا سلوک جاری رکھے ہوئے ہیں اور گزشتہ 2 برس میں اسی ناروا سلوک کے باعث ایک درجن افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔سوشل میڈیا پر دعویٰ کیا گیا کہ اولڈ ہاؤس کی خاتون انچارچ کی جانب سے وہاں رہائش پذیر افراد کو بروقت مناسب کھانا بھی فراہم نہیں کیا جاتا اور انہیں ہر وقت نیند کرانے کے لیے حد سے زیادہ نیند کی گولی بھی دی جاتی ہیں۔

الزامات میں دعویٰ کیا گیا کہ اولڈ ہاؤس انتظامیہ کی جانب سے معمر افراد کو پیشاب پینے پر مجبور کیا جاتا ہے۔سوشل میڈیا صارفین کا کہنا تھا کہ نجی اولڈ ہاؤس میں مقررہ حد سے زیادہ افراد کو بھی رکھا گیا ہے اور ان پر تشدد کیے جانے کے واقعات بھی ہوتے رہتے ہیں۔

دی اسٹار کے مطابق سوشل میڈیا پر سنگین الزمات سامنے آنے کے بعد محکمہ ویلفیئر کے افسران نے معاملے کی تفتیش شروع کردی اور 18 جون کو حکام نے اولڈ ہاؤس کا دورہ کیا۔فوری طور پر حکام نے الزامات پر کوئی رد عمل نہیں دیا اور بتایا کہ مکمل تفتیش کے بعد ہی کچھ کہا جا سکے گا۔

یہ بھی دیکھیں

کوپن ہیگن کے شدید ردعمل کے بعد ٹرمپ نے اپنا دورہ ڈنمارک ملتوی کردیا

کوپن ہیگن (مانیٹرنگ ڈیسک)جزیرہ گرین لینڈ کی خریداری سے متعلق امریکی صدر کی تجویز پر …