اتوار , 21 جولائی 2019

’2018 میں جنگ کے باعث 7 کروڑ 80 لاکھ افراد بے گھر ہوئے‘اقوام متحدہ

نیویارک (مانیٹرنگ ڈیسک)اقوام متحدہ کے مطابق گذشہ برس جنگ، تنازعات اور مصائب کے باعث 7 کروڑ 80 لاکھ افراد کی ریکارڈ تعداد اپنے گھروں سے نقل مکانی پر مجبور ہوئی۔انسانی بحران نے نبرد آزما ہونے کے لیے عالمی یکجہتی سے متعلق اقوامِ متحدہ کی جاری کردہ رپورٹ میں یہ اعداد و شمار سامنے آئے۔اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے پناہ گزین کے سربراہ فلپو گرینڈی نے جنگ اور تنازعات کو اتنے بڑے پیمانے پر ہونے والی نقل مکانی کی وجہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ’ہم امن قائم رکھنے میں تقریباً ناکام ہوچکے ہیں‘۔خیال رہے کہ 7 کروڑ سے زائد پناہ گزینوں میں سے تقریباً 57 فیصد افراد تنازعات کا شکار ممالک مثلاً افغانستان، میانمار، صومالیہ، سوڈان اور شام سے تعلق رکھتے ہیں۔

رپورٹ، جسے بدھ کو جاری کیا گیا، میں دیے گئے اعداد و شمار ظاہر کرتے ہیں کہ عالمی سطح پر بے گھر ہونے والوں کی تعداد تقریباً 70 سال کے عرصے کے دوران سب سے زیادہ ہے۔عالمی ادارہ برائے پناہ گزین کے سربراہ فلپو گرینڈی نے رپورٹ جاری کرتے ہوئے اس بات کی نشاندہی کی کہ یہ اندازے ’محدود‘ ہیں کیوں کہ دنیا میں بہت سے پناہ گزین ایسے ہیں جن کا شمار نہیں کیا گیا۔

شمار نہ کیے جانے والے مہاجرین کی وضاحت دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ’یہ وہ افراد ہیں جو جان بچا کر بھاگے اس وجہ سے ان کے لیے اپنے ملک سے ہی دستاویزات حاصل کرنا نہایت مشکل ہیں‘۔مشرق وسطیٰ میں جاری تنازعات کے باعث ہزاروں اور سیکڑوں افراد اپنی جانوں پر کھیل کر بحیرہ روم سے گزر کر یونان اور روم پہنچے جس کے باعث یورپ میں جنم لینے والے نام نہاد بحران کی وضاحت کرتے ہوئے یو این این سی آر کے سربراہ نے اس بات پر اصرار کیا کہ کھلے دروازوں کی پالیسی کی انتہائی ضرورت ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’یہ صورتحال تھوڑی بہت اسی طرح ہے جس طرح یورپ میں سال 2015 کے دوران ایک کے بعد ایک سرحد بند ہونے لگی‘۔ان کا کہنا تھا کہ ’میں جانتا ہوں کہ ہم بہت زیادہ کا مطالبہ کررہے ہیں لیکن یہ میرا کام ہے کہ ان ممالک سے درخواست کروں کی اپنی سرحدیں کھلی رکھیں’۔

یہ بھی دیکھیں

ایران سے جنگ کرنا نہیں چاہتے، سعودی عرب

نیویارک (مانیٹرنگ ڈیسک)اقوام متحدہ میں سعودی عرب کے مستقل مندوب عبداللہ المعلمی نے کہا ہے …