بدھ , 3 مارچ 2021

سعودی عرب میں ایک سو باون افراد کے سر قلم

میڈیا رپورٹس کے مطابق سعودی عرب کی وزارت داخلہ نے اعلان کیا ہے کہ اس ملک کے مشرقی علاقے کے دمام شہر میں جھگڑے کے دوران ایک شخص کو قتل کر دینے کے جرم میں سعد بن محمد عثمان کا سر قلم کر دیا گیا ہے-عثمان کو موت کی سزا دیئے جانے کے بعد رواں سال میں سعودی عرب میں سزائے موت پانے والے ملکی اور غیر ملکی شہریوں کی تعداد ایک سو باون ہوگئی ہے – ایمنسٹی انٹرنیشنل نے ایک بیان میں سعودی عرب میں دوہزار پندرہ میں بے تحاشہ سزائے موت دیئے جانے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ انیس سو پنچانوے سے اب تک سعودی عرب میں اتنی بڑی تعداد میں سزائے موت دیئے جانے کی کوئی مثال نہیں ملتی -ایمنسٹی انٹرنیشنل نے گذشتہ مہینے بھی سعودی عرب کی ڈکٹیٹر شاہی حکومت کے خلاف مظاہروں میں حصہ لینے کے الزام میں دسیوں افراد کو سزائے موت دیئے جانے کے امکان پر انتباہ دیا تھا- سعودی عرب کی ڈکٹیٹر آل سعود حکومت اپنے مخالف اکثر سیاسی رہنماوں اور کارکنوں کو دہشت گردانہ سرگرمیوں میں ملوث ہونے اور حکومت مخالف پرامن مظاہروں میں شرکت کے الزام گرفتار کرکے تشدد کا نشانہ بناتی ہے- سعودی عرب کی عدالتیں بھی ان سیاسی رہنماوں اور کارکنوں کو تشدد کے ذریعے لئے گئے اعتراف کی بنیاد پر طویل عرصے تک جیلوں میں ڈال دیتی ہے اور سزائے موت دے دیتی ہے۔

یہ بھی دیکھیں

شہید قاسم سلیمانی کے قتل کا جواب امریکہ کو دینا ہو گا: ایران

مجید تخت روانچی نے ایران اور امریکہ کے مابین قیدیوں کے تبادلے کے سوال پر …