جمعرات , 22 اگست 2019

ایک ہم ہیں کہ لیا اپنی ہی صورت کو بگاڑ

(عارف بہار)

وفاقی کابینہ میں سابق صدر آصف زرداری اور سابق وزیر اعظم میاں نوازشریف کے بیرونی دوروں کی ایک ہوش رُبا تفصیل بیان کی گئی ہے جس کے مطابق سابق صدر آصف زرداری نے اپنے پانچ سالہ عہد میں ایک سو چونتیس غیر ملکی دورے کئے جن پرایک سو بیالیس کروڑ کی لاگت آئی جبکہ وزیر اعظم میاں نوازشریف نے چار سال کے دوران بیانوے غیر ملکی دورے کئے جن پر ایک سوتراسی کروڑ کی لاگت آئی۔آصف زرداری کے دوروں کا مجموعی دورانیہ دوسو ستاون دن جبکہ نوازشریف کے دوروں کا مجموعی دورانیہ دو سو باسٹھ دن بنتا ہے۔ آصف زرداری نے دوبئی کے اکیاون اور نوازشریف نے لندن کے چوبیس دورے کئے ۔حدتو یہ ایک سال کے وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے بھی دوروں کا ریکارڈ قائم کرنے کی کوشش کی۔ ان دوروں میں حکمرانوں کے ساتھ مستفید ہونے والوں کی تعداد بھی ہزارو ں میں ہے ۔ان میں سرکاری اور نجی کی کوئی تفریق نہیں گویا کہ حکمران بننے کا مطلب ہی قومی خزانے پر مستقل بوجھ بنناہے اور حکمران بننے کے بعد نجی زندگی کا تصور بھی ختم ہوجاتا ہے ۔کیا ہی اچھا ہوتا کہ اگر بیتے ہوئے دس سال سے تھوڑا پیچھے جا کر جنرل پرویز مشرف اور ان کی زیر سایہ وزرائے اعظم کے دوروں کی تفصیل بھی سامنے لائی جاتی تاکہ عام آدمی کو موازانہ کرنے میں آسانی ہوتی۔

بیرون ملک دورہ کسی بھی حکمران کا صوابدیدی اور قانونی اختیار ہوتا ہے اور عہدہ ومنصب اسے یہ حق دیتا ہے مگر دورے کی ٹھوس جوازیت ہونا بھی لازمی ہوتا ہے کیونکہ ان دوروں کے لئے جو رقم خرچ ہوتی ہے وہ عوام کے ٹیکسوں سے جمع ہوتی ہے۔اس لئے بیرونی دوروں کے لئے ٹھوس جوازیت اور احتیاط لازم ہوتی ہے۔صرف آصف زرداری اور میاںنوازشریف کی ہی بات نہیں ماضی میں اسراف ،نمود ونمائش ،فضول خرچی ہمارا قومی شعار رہا ہے ۔ہمارے مقابلے میں بھارت نے قناعت اور سادگی کو اپناکر اپنی معیشت کو بہتر بنایا ۔انہوں نے ایک مدت تک ’’میڈ ان انڈیا‘‘ چیزوں کو فروغ دیا ۔اس کے لئے کڑے فیصلے کئے اور آج اس کا نتیجہ ظاہر ہے کہ وہ دنیا کی تیسری بڑی معیشت بننے کے خواب دیکھ رہا ہے۔جب بھارت کفایت شعاری اور سادگی کی راہ پر چل رہا تھا تو ہم مصنوعی چکا چوند کا شکار تھا ۔بھارت کے حکمران جن گاڑیوں کو استعمال کرتے تھے ان پر ہمارے وزراء اپنے پی آر او کو بٹھانا بھی پسند نہ کریں ۔جب اپنے حکمرانوں کی امپورٹڈ نیلی پیلی ٹائیوںکے مقابلے میںبھارتی حکمران طبقات کے لباس کی سادگی آج بھی متحیر کردیتی ہے ۔

2003میں بھارت کے تین ہفتے کے ایک سفر میں دہلی کے چانکیہ پوری علاقے میں ان کے وزرا ء اور کئی دوسرے اعلیٰ حکام جن میں بھارت کی قائم کردہ کشمیر کمیٹی کے سربراہ رام جیٹھ ملانی،مولانا ابواکلام آزاد کی نواسی اور اس وقت راجیا سبھا کی وائس چیئرپرسن نجمہ ہبت اللہ کی رہائش گاہوں پر جانے کا اتفاق ہوا توسادگی در ودیوار سے ٹپک رہی تھی ۔وہ ہماری طرح مقروض بلکہ نسل در نسل مقروض بھی نہیں تھے لیکن اس کے باوجود ان کا کلچر قومی خزانے کو احتیاط سے استعمال کرنے کی گواہی دے رہا تھا ۔ جس طرح ایک پاکستان کو دوبئی جا کر ایک نئی دنیا میں پہنچنے کا احساس ہوتا تھا اسی طرح ایک بھارتی شہری کو پاکستان آکر ایک الگ دنیا میں آنے کا احساس ہوتا تھا کیونکہ اس وقت پاکستان کی منڈیاں جاپانی ،تائیوانی ،کورین اور روسی مصنوعات سے بھری ہوتی تھیں۔ظاہر ہے کہ یہ مصنوعات بھارت کی تیار کردہ مصنوعات کے مقابلے میں زیادہ بہتر اور میعاری ہوتی تھیں اس لئے ایک بھارتی کا پاکستان میں ان مصنوعات کودیکھ کر حیرت میں مبتلا ہونا فطری تھا۔بھارت اندر ہی اندر خود کفالت اور خود انحصاری کی راہ پر چلتا رہا اور ہمیں’’ افغانستان ‘‘کا مرض اندرہی اندر گھن کی طرح چاٹتا رہا ۔ہم جس عسکریت کوبے ہنگم اور غیر منظم بناتے رہے وہ ہماری قومی شناخت اور قومی معیشت کے لئے دیمک ثابت ہوتی رہی ۔

یہاں تک ایک مرحلے پر یہی پالیسی دہشت گردی کا عفریت بن کر خود ہمی پر ٹوٹ پڑی جس سے سرمایہ کار بھاگ گئے ،سیاح گھبر ا گئے ،بیرونی پہچان پر بدنامی کا غلبہ ہوگیا اور اسی کے نتیجے کے طور پر قومی معیشت کی حالت مریض جاں بہ لب کی سی ہو گئی آئی ایم ایف پر ہمارا انحصار بڑھتا جا رہا تھا اورہم قرض در قرض کی دلدل میں دھنستے جا رہے تھے ۔قرض کی مے پر ہمارے حکمران اور بااثر طبقات کی عیاشیاں جا ری رہیں جس سے مجموعی طور پر اصراف ،نمود ونمائش ،فضول خرچی ،قومی خزانے اور املاک کو امانت سمجھنے کا تصور کمزور اور آخر کار عنقا ہو کر رہ گیا۔ہمارے حکمرانوں نے قومی خزانے کو حلوائی کی دکان پر نانا جی کی فاتحہ کے محاورے کو عملی شکل میں پیش کیا ۔انہوں نے قومی خزانے پر عمرے اور حج بھی کرائے اور حد تو دیکھیں ٹپ کی مد میں بھی کروڑوں روپے پھونک دئیے ۔

یہ سوال تو بنتا ہے کہ آخر ابن بطوطہ مزاج سیر وسیاحت کے دلدادہ حکمرانوں کے دوروں سے ملک وقوم کو کیا فائدہ پہنچتا تھا ۔حکمرانوں کے دورے ،بھاری بھرکم وفود کے ساتھ سیروسیاحت ،سرکاری حج اور عمرے یہ سب ایک مخصوص ذہنیت اور کلچر کا ثبوت ہے اور یہ ذہنیت اور کلچر ایک دن میں وجود میں آیا نہ ہی کسی ایک شخص نے پیدا کیا ۔یہ برسوں کے سفر میں ہمارے مجموعی قومی اور سماجی رویوں سے تشکیل پاتا رہا ۔اب اس عمل کو ریورس گیئر لگانا آسان نہیں ۔یہ ایک جمے جمائے نظام اور کلچر کے ساتھ جنگ لڑنے کے مترادف ہے ۔جلد یا بدیر یہ جنگ لڑنا پڑے گی ۔اس پالیسی سے قومی خزانے کو پہنچنے والے نقصان کی تلافی اب ممکن تو نہیں مگر آنے والے دنوں کے لئے کوئی اچھی اور قابل تقلید مثال قائم ہو توہمارا سماجی اور معاشی دیوالیہ پن دور کرنے میں کچھ مدد ضرور ملے گی۔بشکریہ مشرق نیوز

یہ بھی دیکھیں

امریکہ ایران کشیدگی کے خطے پر اثرات

(مرزا اشتیاق بیگ) برطانیہ کے زیر انتظام جبرالٹر، مسلمانوں میں ’’جبل الطارق‘‘ کے نام سے …