اتوار , 15 ستمبر 2019

‘جیرڈ کشنر’صدی کی ڈیل’ پرمعاونت کے حصول کے لیے مشرق وسطیٰ روانہ

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک)امریکی ذرائع ابلاغ کے مطابق وائٹ ہائوس میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سینیر مشیر اوران کے داماد جیرڈ کشنر مشرق وسطیٰ کے ممالک کا دورہ کر رہے ہیں ۔ان کے اس دورے کا مقصد خطے کے ممالک کی قیادت کو فلسطینیوں اور اسرائیل کے درمیان ‘صدی کی ڈیل’ نامی مجوزہ صدر ٹرمپ کے منصوبے کے لیے فنڈز کے حصول کو یقینی بنانا ہے۔

امریکی جریدے ‘فاینیتی فیئر’ کی طرف سے جاری کردہ ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ جیرڈ کشنر خطے کے ممالک کو بتائیں گے کہ ان کی طرف سے امریکی منصوبے کے لیے فنڈز کے حصول سے فلسطینیوں اور اسرائیلیوں کےدرمیان سیاسی سمجھوتے کی راہ ہموار ہوگی۔

امریکی حکومت کے ایک سینیر عہدیدار نے بتایا کہ کوشنرمشرق وسطیٰ کے ممالک کی قیادت سےملاقات کےدوران ان ملکوں کی طرف سے امریکا کے مجوزہ امن پلان کے لیے فنڈز کے حصول بات کریں گے۔ امریکا یہ جاننا چاہتا ہے کہ آیا خطے کے ممالک صدر ٹرمپ کے مجوزہ امن مشن کے حوالے سے کس حد تک سنجیدہ ہیں۔

خیال رہے کہ صدرٹرمپ کے مشیر جیرڈ کشنر مشرق وسطیٰ کئے پانچ ممالک کے دورے پرسوموار کو روانہ ہوئے ہیں۔ وہ سعودی عرب بھی جائیں گےجہاں وہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے بھی ملاقات کریں گے۔ امریکی جریدکے مطابق جیرڈ کشنر اس کے علاوہ مصر، اردن، اسرائیل اور مراکش بھی جائیں گے جہاں وہ صدی کی ڈیل منصوبے کے لیے ان ممالک کی معاونت اور حمایت حاصل کرنے کی کوشش کریں گے۔

چند ہفتے قبل جاپان میں ہونے والی جی 20 اجلاس کے موقع پر ایوانکا ٹرمپ کو محمد بن سلمان کے قریب اسٹیج پردیکھا گیا تھا تاہم امریکی حکام نے یہ نہیں بتایاکہ آیا محمد بن سلمان اور ایوانکا ٹرمپ نے اجلاس میں ملاقات کی تھی یانہیں۔

فلسطینی حکام اور سیاسی قیادت نے امریکا کے مجوزہ امن منصوبے کے اقتصادی پیکج کو شدید تنقید کا نشانہ بنا کر اسے مسترد کردیا ہے۔ فلسطینیوں کا کہنا ہے کہ جب تک ان کےسیاسی حقوق انہیں فراہم نہیں کیے جاتے اس وقت مالی مراعات یاس سہولیات کی بات بے معنی ہے۔امریکی حکام کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ کا امن منصوبہ’صدی کی ڈیل’ تیار ہے مگر اسرائیل میں نیتن یاھو کی جانب سے حکومت کی تشکیل میں ناکامی کے باعث یہ منصوبہ آگے نہیں بڑھایا جاسکا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

ایران کشمیری عوام کو انسان دوستانہ امداد فراہم کرنے کے لئے تیار

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک)اسلامی جمہوریہ ایران کی انجمن ہلال احمر نے پاکستان کی جمعیت ہلال احمر …