اتوار , 17 نومبر 2019

فلسطینی اتھارٹی اسرائیل کے حوالے سے اعلانات پر عمل درآمد کرے: حماس

مقبوضہ بیت المقدس (مانیٹرنگ ڈیسک)اسلامی تحریک مزاحمت’حماس’ نے فلسطینی اتھارٹی پر زور دیا ہے کہ وہ اسرائیل کے بائیکاٹ اور معاہدوں پرعمل درآمد روکنے کے اعلانات پرعمل درآمد یقینی بنائے۔ حماس کے ترجمان حازم قاسم نے کہا کہ فلسطینی اتھارٹی کی طرف سے اسرائیل کے ساتھ طے پائے تمام معاہدے ختم کرنے کا اعلان درست سمت میں اہم پیش رفت ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ فلسطینی مزاحمتی تنظیموں کی طرف سے اسرائیل کے بائیکاٹ اور تمام معاہدے ختم کرنے کا مطالبہ درست ہے۔

انہوں نے کہا کہ فلسطینی اتھارٹی کے سیکیورٹی اداروں کی طرف سے اسرائیل کےساتھ تعاون جاری رہنا اور مشترکہ کارروائیوں میں فلسطینیوں کی گرفتاریاں رام اللہ اتھارٹی کے دعوئوں کے حوالے سے کئی سوالات کو جنم دے رہی ہیں۔انہوں نے صہیونی ریاست کو خبر دار کیا ہے کہ بیت المقدس میں فلسطینیوں کے خلاف جارحانہ اور نسل پرستانہ پالیسی کے سنگین نتائج برآمد ہوں کی جن کی تمام تر ذمہ داری صہیونی ریاست پرعاید ہوگی۔

حماس کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیاہے کہ بیت المقدس میں فلسطینی شہریوں کے گھروں کی مسماری بالخصوص وادی الحمص میں فلسطینی شہریوں کے گھروں کی مسماری کا آپریشن ریاستی دہشت گردی کی بدترین شکل ہے۔بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ بیت المقدس کے فلسطینیوں کے خلاف صہیونی ریاست کی وحشیانہ پالیسی پرعالمی برادری کی مجرمانہ خاموشی ناقابل قبول ہے۔ بیت المقدس میں فلسطینیوں کے مکانات کی مسماری سنگین جرم ہے اور اس پر خاموش رہنے کا کوئی جواز نہیں۔

ترجمان کا مزید کہا گیا ہے کہ امریکی انتظامیہ کی طرف سے فلسطینیوں کے خلاف صہیونی ریاستی دہشت گردی کی سرپرستی کی تاریخ میں کوئی مثال نہیں ملتی۔ وادی حمص میں صہیونی فوج کی طرف سے فلسطینیوں کے گھروں کی مسماری پر امریکا نے صہیونی دشمن کا ساتھ دے کر ثابت کیاہے کہ وہ مجرم کے ساتھ ہے۔حماس نے صہیونی ریاست کی جارحیت کے خلاف القدس کے عوام کے عزم و استقامت کو شاندار خراج تحسین پیش کیا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

ایران کے خلاف نام نہاد قرارداد کی کوئی حیثیت نہیں ہے: ایرانی دفترخارجہ

تہران: اسلامی جمہوریہ ایران کی وزارت خارجہ کے ترجمان سید عباس موسوی نے اقوام متحدہ …