پیر , 16 دسمبر 2019

امریکا کی نئی پابندیوں پر روس کا ردعمل

ماسکو (مانیٹرنگ ڈیسک) روس نے ماسکو کے خلاف امریکی پابندیوں کے دوسرے پیکج کو اشتعال انگیز قراردیتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے واضح ہوگیا ہے کہ امریکا ماسکو کو اپنی داخلہ اور خارجہ پالیسیوں پر نظر ثانی کرنے کے مجبور نہیں کرسکا ہے۔

روسی وزارت خارجہ کی ترجمان ماریا زاخارووا نے کہا ہے کہ امریکا نے برطانیہ میں روس کے سابق جاسوس سرگئی اسکریپال کو زہر دئے جانے کے واقعے سے ماسکو پر دباؤ ڈالنے کے لئے استفادہ کیا ہے۔ روسی وزارت خارجہ کی ترجمان نے کہا کہ واشنگٹن اور اس کے اتحادیوں نے گذشتہ چند برسوں کے دوران روس پر دباؤ ڈالنے کے لئے بارہا طرح طرح کے ہتھکنڈے استعمال کئے ہیں لیکن ان میں سے کسی کو بھی کوئی کامیابی نہیں ملی۔

امریکا نے روس کے خلاف پہلے مرحلے کی پابندی اگست دوہزار اٹھارہ میں کیمیا‏ئی اور حیاتیاتی اسلحوں کی نابودی کے انیس سو اکیانوے کے کنونشن کے بہانے عائد کی تھی۔جبکہ روس کے سابق جاسوس سرگئی اسکریپال اوراس کی بیٹی کو مارچ دوہزار اٹھارہ میں برطانیہ کے شہر سالزبری میں زہر دے دیا گیا تھا۔برطانیہ نے اس واقعے کا ذمہ دار روس کو قراردیا تھا لیکن روس نے اس الزام کی سختی سے تردید کی تھی۔

یہ بھی دیکھیں

فور بی مہم کا مقصد کیا ہے

دنیا کے زیادہ تر افراد خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کے خلاف 2017 …