جمعہ , 23 اگست 2019

مستقل سردرد کا شکار بنادینے والی عام عادتیں

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سر میں درد رہنا کوئی غیر معمولی بات نہیں بلکہ اکثر اوقات یہ بے ضرر ہوتا ہے اور خود ہی ختم بھی ہوجاتا ہے۔عام طور پر سردرد اس وقت ہوتا ہے جب سر میں خون کی شریانیں، مسلز اور اعصاب بہت زیادہ متحرک ہوجائیں۔جب یہ درد کے حوالے سے حساسیت رکھنے والے اسٹرکچر زیادہ متحرک ہوتے ہیں یا کیمیائی سرگرمی دماغ میں تبدیلی لاتی ہے تو ایک عدم اطمینان کا احساس ہوتا ہے یا یوں کہہ لیں سردرد محسوس ہونے لگتا ہے۔ہر ایک میں اس کی وجوہات مختلف ہوسکتی ہیں مگر کچھ عام عادتیں ایسی ہیں جو کسی کو بھی سردرد کا شکار بناسکتی ہیں۔

بہت زیادہ پراسیس گوشت کا استعمال
ویسے تو یہ کافی عجیب محسوس ہوگا کہ گوشت کھانے کا نتیجہ سر میں درد کی شکل میں ہوسکتا ہے، مگر ان دونوں کے درمیان ایک تعلق موجود ہے۔ اس کی وجہ نائٹریٹ ہے، پراسیس گوشت میں موجود بیکٹریا منہ میں جاکر نائٹریٹ سے رابطہ کرتا ہے، جس سے نائٹرک آکسائیڈ گیس کی سطح بڑھ جاتی ہے جس کا نتیجہ سردرد کی شکل میں نکلتا ہے۔

نیند کی کمی یا نیند کی عادات بدلنا
اگر آپ کو اکثر اٹھنے کے بعد سردرد کا سامنا ہوتا ہے تو اس کی ایک بڑی وجہ نیند کا کوئی معمول نہ ہونا یا اس کی کمی ہوسکتی ہے، یہ دونوں سردرد کا باعث بنتے ہیں۔ ایک تحقیق میں دریافت کای گیا کہ نیند کی کمی سردرد کا شکار بناتی ہے اور کم سونا عادت بنالیں تو یہ سردرد ہر وقت ک مسئلہ بن سکتا ہے، اس کی وجہ تو مکمل طور پر واضح نہیں، مگر ممکنہ طور پر ایسا کرنے درد برداشت کرنے کی صلاحیت متاثر ہونا ہے۔

کھانے سے دوری
کئی بار مصروفیات کی وجہ سے ناشتا یا دوپہر کا کھانا رہ جاتا ہے، تاہم اگر اس کو عادت بنالیا جائے تو آپ کا سر اس پر ضرور احتجاج کرتا ہے، کھانا چھوڑنا بھوکا تو بناتا ہی ہے اس کے ساتھ ڈی ہائیڈریشن کی وجہ بھی بنتا ہے اور یہ دونوں سردرد کا باعث بنتے ہیں۔ دماغ میں موجود حفاظتی میکنزم آپ کو اس درد کے ذریعے پیغام دیتا ہے کہ اپنا بہتر خیال رکھنے کی ضرورت ہے۔

پانی کی کمی
کھانے سے دوری کے ساتھ ساتھ پانی کم پینا بھی اکثر سردرد کو مستقل عارضہ بنا دیتا ہے، کیونکہ ڈی ہائیڈریشن سردرد کا باعث بنتا ہے۔ اس کی اصل وجہ تو اب تک دریافت نہیں ہوسکی مگر ماہرین کا ماننا ہے کہ اس کی ممکنہ وجہ خون کی فراہمی کی شرح میں کمی ہے۔ ایسا ہونے کی وجہ سے دماغ تک آکسیجن کم پہنچتی ہے۔

بیٹھنے کا خراب انداز
اگر آپ کندھے اور کمر جھکا کر چلنے کے عادی ہیں تو سردرد پر حیران نہیں ہونا چاہیے، اس طرح جھک کر چلنا گردن کے پچھلے حصے کے مسلز پر دباؤ بڑھاتا ہے، جس سے ریڑھ کی ہڈی کے اعصاب متاثر ہوتے ہیں اور گردن کے مسلز میں کھچاؤ پیدا ہوتا ہے، جس سے سر درد ہونے لگتا ہے۔

ذہنی تناؤ
ذہنی تناؤ سردرد کی سب سے عام وجہ ہے، ان دونوں کے درمیان تعلق تو واضح ہے مگر اس کا میکنزم زیادہ کلیئر نہیں، مگر مانا جاتا ہے کہ تناؤ کے شکار افراد میں درد کے حوالے سے حساسیت بڑھ جاتی ہے اور جسم کو درد کا اثر زیادہ محسوس ہوتا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

کیا آپ جانتے ہیں کہ روزانہ ہر رات 8 گھنٹے کی نیند لینا کیوں ضروری ہے؟

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) اگر آپ کی گھڑی کا الارم صبح بج بج کر چپ ہوجائے اور …