جمعرات , 21 نومبر 2019

پانی روکنے کا اقدام پاکستان پر جارحیت تصور ہوگا : ترجمان دفتر خارجہ

 

اسلام آباد : ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ مغربی دریاؤں پر پاکستان کا خصوصی حق ہے اور بھارت کی جانب سے ان دریاؤں کا پانی روکنے کی کوشش جارحیت کا اقدام تصور کیا جائے گا۔

ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل نے ہفتہ وار پریس بریفنگ میں کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کو 75 روز ہوچکے ہیں، بھارت کی ریاستی دہشت گردی اور بربریت جاری ہے۔ کشمیر میں مزید 3 کشمیری شہید کر دیے گئے، وادی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں جاری ہیں۔ دواؤں اور اشیائے خوراک کی شدید قلت ہے۔ مقبوضہ کشمیر کے عوام کے بیرونی دنیا سے رابطے منقطع ہیں۔

ڈاکٹر محمد فیصل نے کہا کہ بدترین کرفیو کے نفاذ اور دنیا بھر سے مقبوضہ کشمیر کا رابطہ ختم کرنے کے 2 ماہ سے زائد عرصے بعد بھارتی قیادت کی جانب سے ایسے بیانات اس حقیقت کی واضح مثال ہے کہ بھارت کی موجودہ حکومت بھارت کو ایک غیر ذمہ دار جارحانہ ریاست بنانا چاہتی ہے جو انسانی حقوق یا عالمی ذمہ داریوں پر عمل نہیں کرتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سندھ طاس معاہدے کے تحت 3 مغربی دریاؤں پر پاکستان کے خصوصی اختیارات ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ مودی کا پانی بند کرنے کا اشتعال انگیز بیان قابل مذمت ہے۔ پانی روکنے کا اقدام پاکستان پر جارحیت تصور ہوگا اور پاکستان اس پر ردعمل دینے کا حق رکھتا ہے۔ دریاؤں کے پانی کا بہاؤ معاہدے کے مطابق جاری رہنا چاہیئے۔

کرتار پور راہدری سے متعلق بات کرتے ہوئے ترجمان کا کہنا تھا کہ کرتار پور راہداری کا کام تقریباً مکمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت انتہا پسند اور جارحانہ پالیسیوں پر خود تنہائی کا شکار ہے۔ نریندر مودی خود اپنی ریاست کو بند گلی میں لے گئے ہیں۔ پاکستان تسلسل کے ساتھ کشمیر کا مسئلہ اٹھا رہا ہے، ہماری بھرپور سفارتی کوششوں سے بھارت پریشانی کا شکار ہے۔

ترجمان ن کہا کہ ترکی کے صدر کے دورہ پاکستان پر انہوں نے تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ترک صدر رجب طیب اردوان کا دورہ پاکستان ملتوی ہوگیا ہے جس کی نئی تاریخوں کا تعین کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ نریندر مودی نے ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ان کی حکومت پاکستان کا پانی روک کر اس کا رخ ہریانہ کی جانب کردے گی کیونکہ اس پر ان کے ملک کا اور ریاست کے کسانوں کا حق ہے۔

یہ بھی دیکھیں

روس کا سعودی عرب میں امریکی فوجیوں کے تعینات ہونے پر انتباہ

ماسکو: روس کے نائب وزیر خارجہ بوگدانوف نے سعودی عرب میں امریکی فوجیوں کے تعینات …