ہفتہ , 18 جنوری 2020

مونگ پھلی کی وجہ سے طیارے کو اڑان بھرنے سے روک دیا

ویانا: آسٹریا سے لیور پول جانے والی پرواز کو ایک خاتون مسافر نے اپنی بیٹی کو مونگ پھلی سے ہونے والی ’الرجی‘ سے بچانے کی خاطر طیارے کو اڑان بھرنے سے روک دیا۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق لواڈا ایئرلائن کی پرواز سے واپس لیور پول جانے والی پرواز کے دوران عملے کو اس وقت غیر معمولی صورتحال کا سامنا کرنا پڑا جب 46 سالہ خاتون اچانک سیٹ بیلٹ کھول کر نشست سے کھڑی ہوگئی۔

خاتون نے طیارے کو ٹیک آف سے رکواتے ہوئے کہا کہ عملے نے اس کے معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے کیونکہ طیارے میں سوار ہوتے ہوئے انہوں نے کیبن کریو سے کہا تھا کہ وہ مونگ پھلی یا اس سے تیار کردہ اشیا تقسیم نہیں کریں گی۔

خاتون کے مطابق اس کی 19 سالہ بیٹی کو مونگ پھلی سے الرجی ہے جس سے اسے شدید پریشانی رہتی ہے، لیکن عملے نے اس کے تحفظات کو اہمیت نہیں دی اور بات سنی ان سنی کردی۔

مورس نامی خاتون کا کہنا ہے کہ وہ بیٹی کی صحت کو داؤ پر نہیں لگا سکتی تھی، اگر 32 ہزار فٹ کی بلندی پر بیٹی کو کچھ ہو جاتا تو کون ذمہ دار ہوتا؟ خاتون کے بقول عملے نے طیارے میں یہ اعلان کرنے سے انکار کردیا کہ کوئی بھی مسافر مونگ پھلی یا اس سے تیار کردہ اشیاء استعمال نہیں کرے گا جس پر احتجاجاً وہ کھڑی ہوگئی۔

بعدازاں مسافر اور عملے میں مذاکرات نتیجہ خیز ثابت ہوئے اور طیارے ٹیک آف کرگیا۔

یہ بھی دیکھیں

کیا اسمارٹ فونز کو بھی جراثیم سے محفوظ رکھا جاسکتا ہے؟

واشنگٹن : امریکی کمپنی نے موبائل فون کو جراثیم سے بچانے کےلیے جدید ٹیکنالوجی سے …