پیر , 20 جنوری 2020

سعودی عرب کو بجٹ خسارے کا سامنا

سعودی عرب کو مسلسل ساتویں سال بھی بجٹ خسارے کا سامنا ہے۔ ملک کا مالیاتی خسارہ 50 ارب ڈالر تک پہنچنے کا امکان ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے عرب نیوز کے مطابق اجلاس کے بعد سعودی وزیر خزانہ محمد الجادان نے کہا کہ آئندہ سال تک ہماری ترجیحات میں پرائیویٹائزیشن شامل ہے۔ ہم ملک میں جاری بڑے پراجیکٹ مکمل کریں گے، ہمارے ویژن 2030ء میں پرائیوٹائزیشن ایک اہم جز ہے۔

سعودی وزارت خزانہ کا کہنا تھا کہ سعودی عرب کو مسلسل ساتویں سال کے دوران بجٹ خسارے کا سامنا ہے، مالیاتی خسارہ 50 ارب ڈالر تک پہنچنے کا امکان ہے جبکہ آئندہ سال 2020ء کے دوران مالیاتی خسارہ 15 ارب ڈالر تک بڑھنے کا امکان ہے۔

خبر رساں ادارے کے مطابق خام تیل کی قیمتوں کے باعث بجٹ خسارہ بڑھ رہا ہے، سعودی عرب کے اخراجات 272 ارب ڈالر رہیں گے، آمدنی 222 ارب ڈالر رہنے کا امکان ہے۔

واضح رہے کہ یمن کی جنگ اور دوسرے مسائل میں سعودی عرب کی مداخلت سعودی بجٹ خسارے  کے اہم وجوہات میں سے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

فلسطین کی آزادی تک دنیا میں امن قائم نہیں ہو سکتا، ایرانی سپریم لیڈر

تہران: ایران کے رہبر انقلاب اسلامی آیت اللہ علی خامنہ ای نے کہا ہے کہ …