ہفتہ , 8 مئی 2021

سعودی اتحاد کی وجہ سے یمن کو 80 کروڑ ڈالر کا ہوا نقصان

یمن کی بحیرہ احمر بندرگاہ ادارے کی کونسل نے اعلان کیا ہے کہ سعودی اتحاد نے گزشتہ پانچ سال کے دوران اس ادارے کو 80 کروڑ ڈالر کا نقصان پہنچایا ہے۔فارس نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق یمن کی بحیرہ احمر بندرگاہ ادارے کی کونسل کے سربراہ محمد ابو بکر اسحاق نے سنیچر کے روز کہا کہ یمن پر حملے اور اس غریب ملک کے جاری محاصرے کی وجہ سے اس ملک کی ترقی میں رکاوٹ پیدا ہو رہی ہے۔یمن کی بحیرہ احمر بندرگاہ ادارے کی کونسل کی رپورٹ کے مطابق 2014 میں مختلف مواد کی حامل کشتیوں اور بحری جہازوں کی تعداد 764 تھی جبکہ 2018 میں یہ تعداد کم ہوکر 191 ہوگئی۔

اس ادارے کا کہنا تھا کہ اس مدت میں سامان کی درآمد میں بھی کافی کمی واقع ہوئی ہے جو 66 لاکھ 40 ہزار ٹن سے کم ہوکر دس لاکھ تین ہزار تک پہنچ گئی ہے۔اس ادارے کا کہنا ہے کہ یمن کے محاصرے کی وجہ سے بہت زیادہ نقصانات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔دوسری جانب تحریک انصار اللہ نے منصور ہادی کی حکومت کے ساتھ ہونے والے معاہدوں کے تحت 14 فوجیوں اور رضاکار فورس کے جوانوں کا تبادلہ کیا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

ایران و چین معاہدے پر امریکہ چراغ پا

امریکی صدر نے ایران اور چین کے 25 سالہ معاہدے پر سخت تشویش کا اظہار …