بدھ , 27 مئی 2020

عباسی شہید اسپتال، زہرخورانی سے ہلاک شخص کا کورونا کا ڈیتھ سرٹیفکیٹ جاری

کراچی کے عباسی شہید اسپتال کی انتظامیہ نے کورونا وائرس جیسی عالمگیر وباء کو مذاق بنا دیا۔ اسپتال میں داخل مریض کا پہلے کورونا پھر فوڈ پوائزننگ سے موت کا اعلان کردیا۔عباسی شہید اسپتال میں زیر علاج کی موت کے بعد اس کے دو ڈیتھ سرٹیفیکٹ جاری کردیے گئے۔فاروق حسین نامی شخص کو فوڈ پوائزننگ کی وجہ سے اہل خانہ 27 مارچ کو عباسی شہید اسپتال لے کر پہنچے تھے۔ڈاکٹروں نے حالت تشویشناک ہونے کی وجہ سے فاروق کو آئی سی یو میں داخل کرلیا۔ فاروق حسین کا آج دوپہر عباسی شہید اسپتال کے آئی سی یو میں انتقال ہوگیا۔

اسپتال انتظامیہ نے فاروق حسین کی کورونا وائرس کے مشتبہ مریض کے طور پر ہلاکت کا سرٹیفیکٹ جاری کردیا۔ سرٹیفکیٹ دیکھ کر اہل خانہ مشتعل ہوگئے اور ان کا کہنا تھا کہ فاروق حسین جب کورونا کا مریض تھا تو آگاہ کیوں نہیں کیا گیا، اور اسے آئی سی یو میں رکھ کر دیگر مریضوں کی زندگی خطرے سے کیوں دوچار کی گئی۔ان کا مزید کہنا تھا کہ کورونا کا مریض تھا تو اسے حفاظتی انتظامات کے تحت متعلقہ اسپتال کیوں منتقل نہیں کیا گیا۔ احتجاج اور شور شرابا کرنے پر ڈاکٹر نے فاروق حسین کی موت کا سرٹیفکیٹ تبدیل کر دیا۔اس سلسلے میں رابطہ کرنے پر کے ایم سی کی ہیلتھ سروسز کی سینئر ڈائریکٹر ڈاکٹر سلمیٰ کوثر نے کہا کہ فاروق حسین کی موت کرونا وائرس سے نہیں بلکہ فوڈ پوائزننگ سے ہوئی ہے۔جنگ سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ شبہ ہونے پر کورونا وائرس کٹ کے ذریعے مریض کا معائنہ کیا گیا مگر کورونا وائرس کا ٹیسٹ منفی آیا۔ انہوں نے کہا کہ مریض کا کورونا وائرس کا ڈیتھ سرٹیفکیٹ کیسے بن گیا اس بارے میں وہ چھان بین کریں گی۔

یہ بھی دیکھیں

میکسیکو میں قتل ہونے والی خواتین کی تعداد میں ریکارڈ اضافہ

میسکیکو میں گزشتہ پانچ برس کے دوران کسی بھی ایک ماہ کے مقابلے میں اپریل …