منگل , 11 مئی 2021

کورونا وائرس سے لندن کے 1.6 ملین افراد کے متاثر ہونے کے خدشے کا اظہار

لندن: ایک نئی اسٹڈی میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ہوسکتا ہے کہ کورونا وائرس سے لندن کے 1.6 ملین افراد کو پہلے ہی متاثر کرچکا ہو اور ان متاثرہ افراد میں نصف لندن کے باہر مقیم ہوں۔ برطانوی اخبار دی سن نے یہ خبر دیتے ہوئے لکھا ہے کہ دن کے اختتام تک ان متاثرہ افراد کی تعداد 2.8 ملین ہوچکی ہوگی۔ اخبار نے لکھا ہے کہ ریسرچرز کا کہنا ہے کہ یہ ہلاکت خیز وائرس 20 فیصد کی شرح سے بڑھنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ اخبار کے مطابق ایج ہیلتھ نامی ادارے نےکہا ہے کہ اگرچہ برطانیہ میں ابھی تک 17 ہزار افراد میں کورونا کا مثبت نتیجہ آیا ہے لیکن ادارے نے خدشے کا اظہار کیا ہے کہ صرف انگلینڈ ہی میں ان کی تعداد کم وبیش 16لاکھ 14 ہزار 505 ہوگی۔ اخبار کے مطابق برطانیہ میں لندن سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے اور لندن میں کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد 7 لاکھ 60 ہزار 590 ہوسکتی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سائوتھ وارک میں ہر چھٹا فرد اس مہلک وائرس کا شکار ہوسکتا ہے، اگرچہ اس برو میں کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد 253 ریکارڈ کی گئی ہے لیکن خیالکیا جاتا ہے کہ اس وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 49139 ہوسکتی ہے۔ ریسرچرزکے مطابق لندن کی دیگر 6 برو یعنی لمبیتھ، برینٹ، کنسنگٹن، چیلسی، ہے رو، ونڈرس ورتھ اور ویسٹ منسٹر شامل ہیں، میں ہر دسواں فرد یعنی کم وبیش 10فیصد افراد اس وائرس کا شکار ہوسکتے ہیں۔ خیال کیا جاتا ہے کہ مڈلینڈز میں 54 282,9 افراد اس وائرس کا شکار ہیں جبکہ وولورہمپٹن میں ہر پندرہواں فرد وائرس سے متاثر تصور کیا جاتا ہے۔ ایج ہیلتھ کے ریسرچرز کا کہنا ہے کہ انھوں نے تعداد کا تخمینہ ہر ریجن میں اموات کی شرح سے لگایا ہے۔ ریسرچرز نے لندن میں مرنے والوں کی شرح 0.7 فیصد اور دارالحکومت کے باہر 0.9 فیصد لگایا ہے۔ ان اعدادوشمار کا انکشاف وزیراعظم بورس جانسن کی جانب سے ایک خط کے ذریعے برطانیہ کے 28 ملین گھرانوں کو یہ یقین دہانی کرائے جانے کے موقع پر کیا گیا ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ حکومت اس مسئلے سے نمٹنے کیلئے ہر ممکن اقدام کرے گی۔

یہ بھی دیکھیں

ایران و چین معاہدے پر امریکہ چراغ پا

امریکی صدر نے ایران اور چین کے 25 سالہ معاہدے پر سخت تشویش کا اظہار …