اتوار , 5 جولائی 2020

ایران اور وینزویلا کے درمیان تیل کی تجارت کا امریکہ سے کوئی تعلق نہیں ہے: صدر روحانی

تہران: اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر مملکت نے کہا ہے کہ ایران کیجانب سے تیل کی مصنوعات کو وینزویلا میں منتقلی؛ دو دوست ملکوں کے درمیان معمول کی تجارت ہے جس کا امریکہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر "حسن روحانی” نے آج بروز بدھ کو ایرانی پارلیمنٹ کے گیارہویں دور کے آغاز سے متعلق افتتاحی تقریب کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے ایران مخالف امریکی پابندیوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ؛ ایران اور دوست ملک وینزویلا کے درمیان تیل کی تجارت کے معاملے میں دخل اندازی کرنا چاہتا ہے حالانکہ اس معاملے کا امریکہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔تفصیلات کے مطابق ایران کیجانب سے 5 آئیل ٹینکرز بشمول "فورچون”، "فارست”، "فاکسون”، "پتونیا” اور "کلاول” کو وینزویلا روانہ کیا گیا ہے جن میں سے تین ابھی وینزویلا پہنچ گئے ہیں اور باقی دوسرے بھی آئندہ دنوں میں اپنی منزل تک پہنچ جائیں گے۔ اس سلسلے میں وینزویلا کے صدر "نکولس مادورو” نے ایرانی حمایتوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ تہران اور کاراکاس، دونوں امن کے خواہاں ہیں اور آزاد تجارت ہمارا جائز اور قانونی حق ہے۔انہوں نے ایرانی عوام کو "انقلابی عوام” قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ کبھی بھی امریکہ کے سامنے سر نہیں جھکائیں گے۔

یہ بھی دیکھیں

روس میں آئينی اصلاحات کا ریفرنڈم، یورپ اور امریکہ چراغ پریشان

یورپی یونین اور امریکہ نے روس میں آئینی اصلاحات کے لیے کرائے جانے والے ریفرنڈم …